Us Ky Chahnay Walon Ka Aj Us ki Gali Main Dharna Hai

غزل
اُس کے چاہنے والوں کا آج اُس کی گلی میں دھرنا ہے
یہی پہ رک جاؤں تو ٹھیک ہے آگے جا کے مرنا ہے

روح کسی کو سن پائے تو یہ جسم بھی لے جاؤں
ویسے بھی اب میں نے اس کا کیا کرنا ہے

تجھے بھی ساتھ رکھتا اور اُسے بھی اپنا دیوانہ بنا لیتا
اگر میں چاہتا تو دل میں کوئی چور دروازه بنا لیتا

میں اپنے خواب پورے کر کے خوش ہوں پر یہ پچھتاوا نہیں جاتا
مستقبل بنانے سے تو اچھا تھا تجھے اپنا بنا لیتا
Ghazal
Us Ky Chahnay Walon Ka Aj Us ki Gali Main Dharna Hai
Yahi rok jaun tu theek agay ja ky marna hai

Roh kisi ko sun paye to yeh jism bhi lay jao
Wasay bhi ab main nay es ka kiya karna hai

Tujhy bhi sath rakhta aur usay bhi apna deewana bana layta
Agar main chahta to dil main koi chor darwaza bana layta

Main apnay khawab pooray kar ky khush hun per yeh pachtawa nahi jata
Mustaqbil banay say to acha tha tujhy apna bana layta

اپنا تبصرہ بھیجیں