Har Ek Sel Bala Aik Ek Shanawar Same Hai

Har Ek Sel Bala Aik Ek Shanawar Same Hai

Har Ek Sel Bala Aik Ek Shanawar Same Hai
Kinare hoon magar sara samandar samne hai

Ek aaina aur itne maskh chehre aur bayak waqt
Bujhi jati hain aankhein ab wo manzar samne hai

Nahi maloom ab es khawab ki tabeer kia ho
Mein narghay mein hoon aur jalta hua ghar samne hai

Sawal hurmat meezan be-tauqeer ke baad
Jo zair-e-aasteen tha ab wo khanjar samne hai

Abhi jo ihtimaam jishan-e-farda mein magan thi
Wohi khalq-e-khuda heraan shashdar samne hai

Har ek sel bala aik ek shanawar same hai
Kinare hoon magar sara samandar samne hai
غزل
ہر اک سیل بلا ایک اک شناور سامنے ہے
کنارے ہوں مگر سارا سمندر سامنے ہے

اک آئینہ اور اتنے مسخ چہرے اور بیک وقت
بجھی جاتی ہیں آنکھیں اب وہ منظر سامنے ہے

نہیں معلوم اب اس خواب کی تعبیر کیا ہو
میں نرغے میں ہوں اور جلتا ہوا گھر سامنے ہے

سوال حرمت میزان بے توقیر کے بعد
جو زیرِ آستیں تھا اب وہ خنجر سامنے ہے

ابھی جو اہتمام جشنِ فردا میں مگن تھی
وہی خلقِ خدا حیران و ششدر سامنے ہے

ہر اک سیل بلا ایک اک شناور سامنے ہے
کنارے ہوں مگر سارا سمندر سامنے ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں