Wagarna Din Sabhi Wehshat Ke Mare Hote Hain

Wagarna Din Sabhi Wehshat Ke Mare Hote Hain

Wagarna Din Sabhi Wehshat Ke Mare Hote Hain
Guzara karne lago tu guzaray hote hain

Woh jism nochnay walon se barh ke zalim hain
Jinhon ne rooh mein khanjar utaray hote hain

Usi nazar mein hi kanta bane khataktay hain
Woh shakhs jis ki hum aankhon ke taray hote hain

Nahi mukarta dil apni kahi se warna dost
Jawaz chorne ke dhair saray hote hain

Hain jin mayen salamat Karen tilawat roz
Keh unkay chehre muqaddas siparay hote hain

Mein aisay azdahon ke bare mein bhi janti hoon
jinhon ne doston ke roop dharay hote hain

Tumhara zouq-e-maseehai aafreen aye shakhs
Magar woh log jihein zakhm pyare hote hain

Wagarna din sabhi wehshat ke maray hote hain
Guzara karne lago tu guzaray hote hain
غزل
وگرنہ دن سبھی وحشت کے مارے ہوتے ہیں
گزارا کرنے لگو تو گزارے ہوتے ہیں

وہ جسم نوچنے والوں سے بڑھ کے ظالم ہیں
جنہوں نے روح میں خنجر اُتارے ہوتے ہیں

اُسی نظر میں ہی کانٹا بنے کھٹکتے ہیں
وہ شخص جس کی ہم آنکھوں کے تارے ہوتے ہیں

نہیں مکرتا دل اپنی کہی سے ورنہ ،دوست
جواز چھوڑنے کے ڈھیر سارے ہوتے ہیں

ہیں جن کی مائیں سلامت ، کریں تلاوت روز
کہ اُنکے چہرے ، مقدس سپارے ہوتے ہیں

میں ایسے اژدھوں کے بارے میں بھی جانتی ہوں
جنہوں نے دوستوں کے روپ دھارے ہوتے ہیں

تمہارا ذوقِ مسیحائی آفریں ، اے شخص
مگر وہ لوگ جنہیں زخم پیارے ہوتے ہیں

وگرنہ دن سبھی وحشت کے مارے ہوتے ہیں
گزارا کرنے لگو تو گزارے ہوتے ہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں