Dhoop Ki Umar Zyada Hai Safar Mujh Se Kam

Dhoop Ki Umar Zyada Hai Safar Mujh Se Kam

Dhoop Ki Umar Zyada Hai Safar Mujh Se Kam
Iss liye zard to hoti hai magar mujh se kam

Raigaan shakhs ki sohbat se bura kuch bhi nahi
Hijr apnao keh uss mein hai zarar mujh se kam

Mein hoon jungle mein utarta hawa zeeli rasta
Khalqat-e-shahr ka hota hai guzar mujh se kam

Har khizan aisay mere zakhm hare karti hai
Sabz lagtay hain baharon mein shajar mujh se kam

Tou nah ho kar bhi yahan itna raha hai mere yaar
Tujh se manoos zyada hai yeh ghar mujh se kam

Koi thaika ho udaasi ka mujhe milta hai
Koi bharta hi nahi narkh idhar mujh se kam

Hath uthaye mein jisay theek nazar aata hoon
Dekhna hai yahan kis ki hai nazar mujh se kam

Kia kaha tou ne falan mujh se bhi kam bolta hai
Mein nahi manta sach yarana kar mujh se kam

Woh faqt rota hai hansta nahi ta dair umair
Mere betay mein hai wehshat ka asar mujh se kam

Dhoop ki umar zyada hai safar mujh se kam
Iss liye zard to hoti hai magar mujh se kam
غزل
دھوپ کی عمر زیادہ ہے سفر مجھ سے کم
اِس لئے زرد تو ہوتی ہے مگر مجھ سے کم

رائگاں شخص کی صحبت سے برا کچھ بھی نہیں
ہجر اپناؤ کہ اُس میں ہے ضرر مجھ سے کم

میں ہوں جنگل میں اُترتا ہوا ذیلی رستہ
خلقتِ شہر کا ہوتا ہے گزر مجھ سے کم

ہر خزاں ایسے مرے زخم ہرے کرتی ہے
سبز لگتے ہیں بہاروں میں شجر مجھ سے کم

تُو نہ ہو کر بھی یہاں اِتنا رہا ہے مرے یار
تجھ سے مانوس زیادہ ہے یہ گھر مجھ سے کم

کوئی ٹھیکہ ہو اُداسی کا مجھے ملتا ہے
کوئی بھرتا ہی نہیں نرخ اِدھر مجھ سے کم

ہاتھ اُٹھائے میں جسے ٹھیک نظر آتا ہوں
دیکھنا ہے یہاں کس کی ہے نظر مجھ سے کم

کیا کہا تو نے فلاں مجھ سے بھی کم بولتا ہے
میں نہیں مانتا سچ یارانہ کر مجھ سےکم

وہ فقط روتا ہے ہنستا نہیں تادیر عمیر
میرے بیٹے میں ہے وحشت کا اثر مجھ سےکم

دھوپ کی عمر زیادہ ہے سفر مجھ سے کم
اِس لئے زرد تو ہوتی ہے مگر مجھ سے کم
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں