Aks Khushboo Hoon Bikharne Se Nah Rokay Koi

Aks Khushboo Hoon Bikharne Se Nah Rokay Koi

Aks Khushboo Hoon Bikharne Se Nah Rokay Koi
Aur bikhar jaon tou mujh ko nah sametay koi

Kaanp uthi hoon mein yeh soch ke tanhai mein
Mere chehre peh tera naam nah parh le koi

Jis tarah khwab mere ho gaye raiza raiza
Iss tarah se nah kabhi toot ke bikhray koi

Mein tou uss din se harasan hoon keh jab hukum mile
Khushk phoolon ko kitabon mein nah rakhay koi

Ab tou uss rah se woh shakhs guzarta bhi nahi
Ab kis umeed peh darwazay se jhankay koi

Koi aahat koi aawaz koi chaap nahi
Dil ki galiyan bari sunsaan hain aaye koi

Aks khushboo hoon bikharne se nah rokay koi
Aur bikhar jaon tou mujh ko nah sametay koi
غزل
عکس خوشبو ہوں بکھرنے سے نہ روکے کوئی
اور بکھر جاؤں تو مجھ کو نہ سمیٹے کوئی

کانپ اُٹھتی ہوں میں یہ سوچ کے تنہائی میں
میرے چہرے پہ ترا نام نہ پڑھ لے کوئی

جس طرح خواب مرے ہوگئے ریزہ ریزہ
اس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

میں تو اُس دن سے ہراساں ہوں کہ جب حکم ملے
خشک پھولوں کو کتابوں میں نہ رکھے کوئی

اب تو اُس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں
اب کس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

کوئی آہٹ کوئی آواز کوئی چاپ نہیں
دل کی گلیاں بڑی سنساں ہیں آئے کوئی

 عکس خوشبو ہوں بکھرنے سے نہ روکے کوئی
اور بکھر جاؤں تو مجھ کو نہ سمیٹے کوئی

اپنا تبصرہ بھیجیں