Iss Se Pehle Keh Tujhe Aur Sahara | Afkar Alvi

Iss Se Pehle Keh Tujhe Aur Sahara | Afkar Alvi

Iss Se Pehle Keh Tujhe Aur Sahara Nah Mile
Mein tere saath hoon jab tak mere jaisa na mile

Kam se kam badle mein Jannat usay de di jaye
Jis mohabbat ke giraftar ko sahra nah mile

Mujh ko ik rang ataa kar ta-keh pehchan rahe
Kal kula yeh nah ho tujh ko mera chehra nah mile

Log kehte hain keh hum log buray aadmi hain
Log bhi aisay jinhon ne hamein dekha na mile

Bas yahi keh ke usay mein ne khuda ko sonpa
Itifaqan kahin mil jaye tu rota nah mile

Tum duaa karte raho mera acha rahe
Koi mil jaye magar aqal ka andha nah mile

Mujh ko dekha tou mujhe aisay lapt kar royi
Jisay ik maan ko koi gomshuda bacha nah mile

Bad duaa hai keh wahan aaw jahan bethte thay
Aur afkar wahan aap ko betha nah mile

Iss se pehle keh tujhe aur sahara nah mile
Mein tere saath hoon jab tak mere jaisa na mile
غزل
اس سے پہلے کہ تجھے اور سہارا نہ ملے
میں ترے ساتھ ہوں جب تک میرے جیسا نہ ملے

کم سے کم بدلے میں جنت اسے دے دی جائے
جس محبت کے گرفتار کو صحرا نہ ملے

مجھ کو اک رنگ عطا کر تا کہ پہچان رہے
کل کلاں یہ نہ ہو تجھ کو مرا چہرہ نہ ملے

لوگ کہتے ہیں کہ ہم لوگ برے آدمی ہیں
لوگ بھی ایسے جنہوں نے ہمیں دیکھا نہ ملے

بس یہی کہہ کے اسے میں نے خدا کو سونپا
اتفاقا کہیں مل جائے تو روتا نہ ملے

تم دعا کرتے رہو میرا اچھا رہے
کوئی مل جائے مگر عقل کا اندھا نہ ملے

مجھ کو دیکھا تو مجھے ایسے لپٹ کر روئی
جیسے اک ماں کو کوئی گمشدہ بچہ نہ ملے

بد دعا ہے کہ وہاں آو جہاں بیٹھتے تھے
اور افکار وہاں آُپ کو بیٹھا نہ ملے

اس سے پہلے کہ تجھے اور سہارا نہ ملے
میں ترے ساتھ ہوں جب تک میرے جیسا نہ ملے

اپنا تبصرہ بھیجیں