Munafiqat Ki Seyahi Ko Dour Karte Hoye-Komal Joya

Munafiqat Ki Seyahi Ko Dour Karte Hoye-Komal Joya

Munafiqat Ki Seyahi Ko Dour Karte Hoye
Mein bujh gaye hoon yahan subah noor karte hoye

Yeh log fehem-o-furasat se mawrah hain abhi
Mein thak nah jaon inhen ba shaoor karte hoye

Mere mizaj ki sakhti se tou nahi waqif
Tou gir parega mujhe choor choor karte hoye

Ameer shahr ko firoon hi nah karden yeh log
Yeh hath bandhay hoye ji huzoor karte hoye

Wohi ana peh meri qehqehay lagata hai
Pasand aai jisay mein ghuroor karte hoye

Meri to jan peh banai dasht-e-wehshat mein
Yeh chand meel ka rasta uboor karte hoye

Mein aaftaab se kam roshni nahi rakhti
Kabhi to dekhna mujhko zahoor karte hoye

Munafiqat ki seyahi ko dour karte hoye
Mein bujh gaye hoon yahan subah noor karte hoye
غزل
منافقت کی سیاہی کو دور کرتے ہوئے
میں بجھ گئے ہوں یہاں صبح نور کرتے ہوئے

یہ لوگ فہم و فراصت سے ماورہ ہیں ابھی
میں تھک نہ جاؤں اِنہیں با شعور کرتے ہوئے

میرے مزاج کی سختی سے تو نہیں واقف
تو گر پڑے گا مجھے چُور چُور کرتے ہوئے

امیرِ شہر کو فرعون ہی نہ کردیں یہ لوگ
یہ ہاتھ باندھے ہوئے جی حضور کرتے ہوئے

وہی انا پہ میری قہقہے لگاتا ہے
پسند آئی جسے میں غرور کرتے ہوئے

میری تو جان پہ بنائی دشتِ وحشت میں
یہ چند میل کا رستہ عبور کرتے ہوئے

میں آفتاب سے کم روشنی نہیں رکھتی
کبھی تو دیکھنا مجھکو ظہور کرتے ہوئے

منافقت کی سیاحی کو دور کرتے ہوئے
میں بجھ گئے ہوں یہاں صبح نور کرتے ہوئے

اپنا تبصرہ بھیجیں