Dil Ki Raghbat Hai Jab Aap Hi Ki Taraf

شاعر:احسان دانش

غزل

دل کی رغبت ہے جب آپ ہی کی طرف
کس لیے آنکھ اٹھتی کسی کی طرف

کیسی الجھن ہے بازی گہہ شوق میں
ہم ہیں ان کی طرف وہ کسی کی طرف

صرف اشک و تبسم میں الجھے رہے
ہم نے دیکھا نہیں زندگی کی طرف

ہم جو غول بیاباں سے واقف نہیں
چل دیے دور کی روشنی کی طرف

دیر و کعبہ سے پیاسی جبینیں لیے
آ گئے ہم تری بندگی کی طرف

رات ڈھلتے جب ان کا خیال آ گیا
ٹکٹکی بندھ گئی چاندنی کی طرف

جب نہ قصد خودی کے دریچے کھلے
اہل دل ہو لیے بے خودی کی طرف
ہ

م نے دل کی لگی ان سے کی تھی بیاں
بات وہ لے گئے دل لگی کی طرف

جادۂ آگہی پر بڑی بھیڑ تھی
سیکڑوں مڑ گئے گمرہی کی طرف

ہیں مرے حلقہ علم میں بالیقیں
آسماں کے پیام آدمی کی طرف

ان کے جلووں کی جانب نظر اٹھ گئی
موج تھی بڑھ گئی چاندنی کی طرف

کون سا جرم ہے کیا ستم ہو گیا
آنکھ اگر اٹھ گئی آپ ہی کی طرف

جانے وہ ملتفت ہوں کدھر بزم میں
آنسوؤں کی طرف یا ہنسی کی طرف

اس کے پندار خود آگہی پر نہ جا
دیکھ انساں کی بے چارگی کی طرف

اپنے ماحول میں کیوں اندھیرا کریں
دیر تک دیکھ کر روشنی کی طرف

موت کی راہ آسان ہو جائے گی
پیار سے دیکھیے زندگی کی طرف

ہم جنوں مند بھی اتنے واقف تو ہیں
عقل کا رخ ہے وارفتگی کی طرف

شاعری کی کسی منزل درد میں
اک دریچہ ہے پیغمبری کی طرف

جانے آنکھوں نے آنکھوں سے کیا کچھ کہا
زندگی جھک گئی زندگی کی طرف

دانشؔ انکار خالق سے ہوتا نہیں
دیکھتا ہوں میں جب آدمی کی طرف


Ghazal
Dil Ki Raghbat Hai Jab Aap Hi Ki Taraf
Kis liye aankh uthti kisi ki taraf

Kaisi uljhan he bazi-gah-e-shauq mein
Hum hain in ki taraf wo kisi ki taraf

Sirf ashk-o-tabassum mein uljhe rahe
Hum ne dekha nahin zindagi ki taraf

Hum jo ghol-e-bayaban se waqif nahin
Chal diye dur ki raushni ki taraf

Dair-o-kaba se pyasi jabinen liye
Aa gae hum teri bandagi ki taraf

Raat Dhalte jab un ka khayal aa gaya
Tuktuki bandh gai chandni ki taraf

Jab na qasd-e-khudi ke dariche khule
Ahl-e-dil ho liye be-khudi ki taraf

Hum ne dil ki lagi un se ki thi bayan
Baat wo le gae dil-lagi ki taraf

Jada-e-agahi par badi bhid thi
Saikdon mud gae gumrahi ki taraf

Hain mere halqa-e-ilm mein bil-yaqin
Aasman ke payam aadmi ki taraf

Un ke jalwon ki jaanib nazar uth gai
Mauj thi badh gai chandni ki taraf

Kaun sa jurm hai kya sitam ho gaya
Aankh agar uth gai aap hi ki taraf

Jaane wo multafit hun kidhar bazm mein
Aansuon ki taraf ya hansi ki taraf

Us ke pindar-e-khud-agahi par na ja
Dekh insan ki bechaargi ki taraf

Apne mahaul mein kyun andhera karen
Der tak dekh kar raushni ki taraf

Maut ki rah aasan ho jaegi
Pyar se dekhiye zindagi ki taraf

Hum junun-mand bhi itne waqif to hain
Aql ka rukh hai waraftagi ki taraf

Shairi ki kisi manzil-e-dard mein
Ek daricha hai paighambari ki taraf

Jaane aankhon ne aankhon se kya kuchh kaha
Zindagi jhuk gai zindagi ki taraf

‘Danish’ inkar khaliq se hota nahin
Dekhta hun main jab aadmi ki taraf

اپنا تبصرہ بھیجیں