Farz karo

فرض کرو:
فرض کرو ہم تارے ہوتے
ایک دوجے کو دور دور سے دیکھ کر جلتے بجھتے
اور پھر ایک دن
شاخ فلک سے گرتے اور تاریک خلاوؤں میں کھو جاتے!
دریا کے دو دھارے ہوتے،
اپنی اپنی موج میں بہتے
اور سمندر تک اس اندھی، وحشی اور منہ زور مسافت
کے جادو میں تنہا رہتے
فرض کرو ہم بھور سمے کے پنچھی ہوتے
اڑتے اڑتے ایک دوجے کو چھوتے اور پھر
کھلے گگن کی گہری اور بے صرفہ آنکھوں میں کھو جاتے
ابر بہار کے جھونکے ہوتے
موسم کے ایک بے نقشہ سے خواب میں ملتے
ملتے اور جدا ہو جاتے
خشک زمینوں کے ہاتھوں پر
سبز لکیریں کندہ کرتے
اور ان دیکھے سپنے بوتے
اپنے اپنے آنسو رو کر چین سے سوتے
فرض کرو ہم جو کچھ ہیں وہ نہ ہوتے
:Farz karo
Farz Karo Hum Taare Hote
Aik Doojey Ko Door Door Sey Daikh Daikh Kar Jaltey Bujhtey
Aur Phir Aik Din
Shaakh-E-Falak Sey Girtey Aur Tareek Khalaaon Mein Kho Jatey

Daria Ke Do Dhaaray Hotey
Apni Apni Moj Mein Bahtey

Aur Samander Tak Us Andhi , Wehshi Aur Munh Zor Musaafat
Ke Jadoo Mein Tanhaa Rehtey
Farz Karo Hum Tare Bhoor Samay Ke Panchi Hotey

Urtey Urtay Aik Doojey Ko Chotey Aur Phir
Khuley Gagan Ki Gehri Aur Be Sarfa Ankho Mein Kho Jatey
Abr-E-Bahaar Ke Jhonkey Hotey

Mosam Ke Aik Be Naqsha Say Khuwaab Mein Miltey
Miltey Aur Juda Ho Jatey

Khushk Zameeno Ke Haatho Par Sabz Lakeerein Kanda Kartey
Aur Un Dekhey Sapney Botey

Apney Apney Aansoo Ro Kar Chain Sey Sotey
Farz Karo Hum Jo Kuch Hein Wo Na Hotay?

اپنا تبصرہ بھیجیں