Yaad Karo Jab Raat Hui Thi

غزل
یاد کرو جب رات ہوئی تھی
تم سے کوئی بات ہوئی تھی

کہہ سکتا تھا کون کسی سے
وہ شکل حالات ہوئی تھی

سب سے ناطہ توڑ کے یکجا
تیری میری ذات ہوئی تھی

انسانوں نے حق مانگا تھا
اور فقط خیرات ہوئی تھی

اس کی کم آمیزی سے میری
تہذیب جذبات ہوئی تھی

مرنے والا خود روٹھا تھا
یا ناراض حیات ہوئی تھی

اسے ذرا سا خط لکھنے پر
خرچ تمام دوات ہوئی تھی

آج شعورؔ صبا کی آمد
کتنی بڑی سوغات ہوئی تھی
Ghazal
Yaad Karo Jab Raat Hui Thi
Tum se koi baat hui thi

Kah sakta tha kaun kisi se
Wo shakl-e-haalat hui thi

Sab se nata tod ke yakja
Teri meri zat hui thi

Insanon ne haq manga tha
Aur faqat khairaat hui thi

Us ki kam-amezi se meri
Tahzib-e-jazbaat hui thi

Marne wala khud rutha tha
Ya naraaz hayat hui thi

Use zara sa khat likhne par
Kharch tamam dawat hui thi

Aaj ‘shuur’ saba ki aamad
Kitni badi saughat hui th

اپنا تبصرہ بھیجیں