Wisal Ki Khwahish Na Rahi Baqi

نظم: وصال کی خواہش نہ رہی باقی
 
کہہ بھی دے اب وہ سب باتیں
جو دل میں پوشیدہ ہیں
 
سارے روپ دکھا دے مجھ کو
جو اب تک نادیدہ ہیں
 
ایک ہی رات کے تارے ہیں
ہم دونوں اس کو جانتے ہیں
 
دوری اور مجبوری کیا ہے
اس کو بھی پہچانتے ہیں
 
کیوں پھر دونوں مل نہیں سکتے
کیوں یہ بندھن ٹوٹا ہے
 
یا کوئی کھوٹ ہے تیرے دل میں
یا میرا غم جھوٹا ہے
Nazam:Wisal Ki Khwahish Na Rahi Baqi

kah bhi de ab wo sab baaten
jo dil mein poshida hain

sare rup dikha de mujh ko
jo ab tak nadida hain

ek hi raat ke tare hain
hum donon us ko jaante hain

duri aur majburi kya hai
us ko bhi pahchante hain

kyun phir donon mil nahin sakte
kyun ye bandhan tuta hai

ya koi khot hai tere dil mein
ya mera gham jhuta hai

اپنا تبصرہ بھیجیں