Badan Ke Qaid Mein Reh Kar Tamam Tar Kato

Badan Ke Qaid Mein Reh Kar Tamam Tar Kato

Badan Ke Qaid Mein Reh Kar Tamam Tar Kato
Yeh umar koi saza hai keh umar bhar kato

Rhe nah aik bhi hami yahan mohabbat ka
Jalado phool ki shaakhon ko aur shajar kato

Khuli fizayen dikhata tha mujh ko aur ek roz
Kisi ne uss ko sikhaya keh uss ke par kato

Tumharay faiday nuqsaan ka hi zikar nah ho
Kisi ki baat jo kato to soch kar kato

Panp rahi hai baghaawat so tum peh wajib hai
Hamari aankhen nikalo, hamaray sar kato

Yeh koi shart nahi hai keh mere pass raho
Tumhara waqt hai chahe jahan jidhar kato

Bari hi umdah likhi dastan mohabbat ki
Magar jo lafz izafi likha hai dar kato

Tamam umar ki awargi ke baad khula
Nah dil ki baat suno aur nah dar bah dar kato

Badan ke qaid mein reh kar tamam tar kato
Yeh umar koi saza hai keh umar bhar kato
غزل
بدن کی قید میں رہ کر تمام تر کاٹو
یہ عمر کوئی سزا ہے کہ عمر بھر کاٹو

رہے نہ ایک بھی حامی یہاں محبت کا
جلادو پھول کی شاخوں کو اور شجر کاٹو

کھلی فضائیں دکھاتا تھا مجھ کو اور اک روز
کسی نے اُس کو سکھایا کہ اُس کے پر کاٹو

تمہارے فائدے نقصان کا ہی ذکر نہ ہو
کسی کی بات جو کاٹو تو سوچ کر کاٹو

پنپ رہی ہے بغاوت سو تم پہ واجب ہے
ہماری آنکھیں نکالو، ہمارے سر کاٹو

یہ کوئی شرط نہیں ہے کہ میرے پاس رہو
تمہارا وقت ہے چاہے جہاں جدھر کاٹو

بڑی ہی عمدہ لکھی داستاں محبت کی
مگر جو لفظ اِضافی لکھا ہے ڈر کاٹو

تمام عمر کی آوارگی کے بعد کھلا
نہ دل کی بات سنو اور نہ در بہ در کاٹو

بدن کی قید میں رہ کر تمام تر کاٹو
یہ عمر کوئی سزا ہے کہ عمر بھر کاٹو
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں