Youn Es Pe Meri Araz-E-Tamanna Ka Asar Tha

Youn Es Pe Meri Araz-E-Tamanna Ka Asar Tha

Youn Es Pe Meri Araz-E-Tamanna Ka Asar Tha
Jaise kisi suraaj ki tapesh mein gul tar tha

Uthi thein darichoon humari bhi nigaheen
Apan bhi kabhi sheher nigaran mein guzar tha

Hum jis ke taghaful-e-shikayat ko gaye thay
Aankh us ne uthai tou jahan zer-o-zabar tha

Shaano pe kabho thay tere bheege howay rukhsaar
Aankhon pe kabhi meri tera damaan-e-tar tha

Khushbon se mohattar hain abhi tak wo guzargha
Sadiyoun se yahana jaise baharon ka nagar tha

Hai un ke sarapa ki tarha khush qadar-o-khush rang
Wo saroo ka poda jo sar-e-raah guzar tha

Qatray ki tarai mein thay tufaaan ke nasheman
Zare ke ekhateen main bagolog ka behnoor tha

Es adaam khaki pe sitaroon ki nazar thi
Us khaak pe kuch jalwa yazdaan ka asaar tha

Mein royaa tou hansne ki sada aai kai bar
Wo jan-e-tamana pas-e-diwaar-e-nazar tha

Danish tha akehara mera perahan hasti
Be parda zamane pe mera aieeb-o-hunar tha

Youn es pe meri araz-e-tamanna ka asar tha
Jaise kisi suraaj ki tapesh mein gul tar tha
غزل
یوں اس پہ مری عرض تمنا کا اثر تھا
جیسے کسی سورج کی تپش میں گل تر تھا

اٹھی تھیں دریچوں ہماری بھی نگاہیں
اپنا بھی کبھی شہر نگاراں میں گزر تھا

ہم جس کے تغافل شکایت کو گئے تھے
آنکھ اس نے اٹھائی تو جہاں زیروزبر تھا

شانوں پہ کبھی تھے تیرے بھیگے ہوئے رخسار
آنکھوں پہ کبھی میری ترا دامنِ تر تھا

خوشبوں سے معطر ہے ابھی تک وہ گزرگاہ
صدیوں سے یہاں جیسے بہاروں کا نگر تھا

ہے ان کےسراپا کی طرح خوش قدر وخوش رنگ
وہ سرو کا پودا جو سرِ راہ گزرتھا

قطرے کی ترائی میں تھے طوفاں کےنشیمن
ذرے کے احاطے میں بگولوں کا بھنور تھا

اس آدم خاکی پہ ستاروں کی نظر تھی
اس خاک پہ کچھ جلوہ یزداں کا اثر تھا

میں رویا تو ہنسنے کی صدا آئی کئی بار
وہ جان تمنا پس دیوار نظر تھا

دانش تھا اکہرا مرا پیراہن ہستی
بے پردہ زمانے پہ مرا عیب وہ ہنر تھا

یوں اس پہ مری عرض تمنا کا اثر تھا
جیسے کسی سورج کی تپش میں گل تر تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں