Meri Aanakh Se Tera Ghum Chhalak Tu Nahi Gayaa

Ghazal

Meri Aanakh Se Tera Ghum Chhalak Tu Nahi Gayaa
Tujhe bhool kar main kahin bhatak tu nahi gayaa

Bara pur faribe hai shahid-o-sheri ka zaiqa
Magar in laboon se tera nemak tu nahi gayaa

Teri bad-dua ka asar hua bhi tu faida
Mere maan parhne se tu chamak tu nahi gayaa

Yeh jo itne pyar se dekhta hai aj kal
Mere dost tu mujh se kahin thak tu nahi gayaa

Tere jism se meri guftagu rehi raat bhar
Main kahi nashe main zyada bak tu nahi gayaa
غزل
میری آنکھ سے تیرا غم چھلک تو نہیں گیا
تجھے بھول کر میں کہیں بھٹک تو نہیں گیا

بڑا پُر فریب ہے شہدُ شیری کا زائقہ
مگر ان لبوں سے تیرا نمک تو نہیں گیا

تیری بد دعا کا اثر ہوا بھی تو فائدہ
میرے مان پڑنے سے تو چمک تو نہیں گیا

یہ جو اتنے پیار سے دیکھتا ہے آج کل
میرے دوست تو مجھ سے کئی تھک تو نہیں گیا

تیرے جسم سے میری گفتگو رہی رات بھر
میں کہیں نشے میں زیادہ بَک تو نہیں گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں