Jo Ahl Zar Hain Wo Ghair Mulkon| Ehsan Danish Ghazal

Jo Ahl Zar Hain Wo Ghair Mulkon| Ehsan Danish Ghazal

Jo Ahl Zar Hain Wo Ghair Mulkon Mein Le Gaye Karoobar Apna
Hamare sone ko jante hain yahan ke sarmaya dar apna

Bayen khyanat yahan bhi logon mein chahte hain waqar apna
Zamana badla kare magar yeh nahi badalte shoaar apna

Hai kon un mein madar jis ka awaam ke khoon par nahi hai
Jo waqt nazdeek aaraha hai kisi ko us ki khabar nahi hai

Jo ahl zar hain wo ghair mulkon mein le gaye karoobar apna
Hamare sone ko jante hain yahan ke sarmaya dar apna
غزل
جو اہل زر ہیں وہ غیر ملکوں میں لے گئے کاروبار اپنا
ہمارے سونے کو جانتے ہیں یہاں کے سرمایہ دار اپنا

بایں خیانت یہاں بھی لوگوں میں چاہتے ہیں وقار اپنا
زمانہ بدلا کرے مگر یہ نہیں بدلتے شعار اپنا

ہے کون ان میں مدار جس کا عوام کے خون پر نہیں ہے
جو وقت نزدیک آرہا ہے کسی کو اس کی خبر نہیں ہے

جو اہل زر ہیں وہ غیر ملکوں میں لے گئے کاروبار اپنا
ہمارے سونے کو جانتے ہیں یہاں کے سرمایہ دار اپنا

اپنا تبصرہ بھیجیں