Sitara War Jale Phir Bujha Diye Gaye Ham

Sitara War Jale Phir Bujha Diye Gaye Ham

Sitara War Jale Phir Bujha Diye Gaye Ham
Phir es ke baad nazar se gira diye gaye ham

Aziz thay hamein nu-war-e-daan-e-koocha-e-ishq
So pechay hat’te gaye rasta diye gaye ham

Shikasht-o-fatah ke sab faisle hote kahin aur
Missal maal-e-ghanimat lota diye gaye ham

Zameen farsh gul-o-lalaa se sajayi gayi
Phir es zameen ki amanat bana diye gaye ham

Duayen yaad kara de gayi theen bachpan mein
So zakham khate rahe aur dua diye gaye ham

Sitara war jale phir bujha diye gaye ham
Phir es ke baad nazar se gira diye gaye ham
غزل
ستارہ وار جلے پھر بجھا دیئے گئے ہم
پھر اس کے بعد نظر سے گرا دیئے گئے ہم

عزیز تھے ہمیں نو وار دان کوچہ عشق
سو پیچھے ہٹتے گئے راستہ دیئے گئے ہم

شکست و فتح کے سب فیصلے ہوتے کہیں اور
مثال مال غنیمت لٹا دیئے گئے ہم

زمین فرش گل و لالہ سے سجائی گئی
پھر اس زمیں کی امانت بنا دیئے گئے ہم

دعائیں یاد کرا دی گئی تھیں بچپن میں
سو زخم کھاتے رہے اور دعا دیئے گئے ہم

ستارہ وار جلے پھر بجھا دیئے گئے ہم
پھر اس کے بعد نظر سے گرا دیئے گئے ہم

اپنا تبصرہ بھیجیں