Duniya Ka Kuch Bura Bhi Tamsha Nahi Raha

Duniya Ka Kuch Bura Bhi Tamsha Nahi Raha

Duniya Ka Kuch Bura Bhi Tamsha Nahi Raha
Dil chahta tha jis tarha waisa nahi raha

Tum se milay bhi tou hum judai ke mor per
Kashti hoi naseeb tou darya nahi raha

Kehtay thay aik pal na jiye gay tere bagair
Hum dono rah gaye hain wo wada nahi raha

Kaatay hain es tarha se roz-o-shab tere bagair
Mein sans lay raha tha per zinda nahi raha

Aankhen bhi dekh dekh ke khawab a gai hain tang
Dil mein bhi ab wo shoq wo lapka nahi raha

Kaise milain aankh kisi aaine se hum
Amjad humare pass tou chehra nahi raha

Duniya ka kuch bura bhi tamsha nahi raha
Dil chahta tha jis tarha waisa nahi raha
غزل
دنیا کا کچھ برا بھی تماشا نہیں رہا
دل چاہتا تھا جس طرح ویسا نہیں رہا

تم سے ملے بھی تو ہم جدائی کےموڑ پر
کشتی ہوئی نصیب تو دریا نہیں رہا

کہتے تھے ایک پل نہ جئیں گئے تیرے بغیر
ہم دونوں رہے گئے ہیں وہ وعدہ نہیں رہا

کاٹے ہیں اسطرح سے روز و شب تیرے بغیر
میں سانس لے رہا تھا پر زندہ نہیں رہا

آنکھیں بھی دیکھ دیکھ کے خواب آگئی ہیں تنگ
دل میں بھی اب وہ شوق وہ لپکا نہیں رہا

کیسے ملائیں آنکھ کسی آئینے سے ہم
امجد ہمارے پاس تو چہرہ نہیں رہا

دنیا کا کچھ برا بھی تماشا نہیں رہا
دل چاہتا تھا جس طرح ویسا نہیں رہا

اپنا تبصرہ بھیجیں