Tasht Tha Tasht Mein Talwar Mere Samnay Thi

Tasht Tha Tasht Mein Talwar Mere Samnay Thi

Tasht Tha Tasht Mein Talwar Mere Samnay Thi
Mein nah larti tu meri haar mere samnay thi

Kitni deewaren girati hoi aai uss tak
Aur wahan jism ki deewar mere samnay thi

Istifada nahi kar pai kisi ishq se mein
Yeh sahulat yunhi baikar mere samnay thi

Itna mushkil to koi kam nahi hota hai
Zindagi jitni garan bar mere samnay thi

Jis ke sab aaib mein logon se chhupati thi wo dost
Inn dinon aaina bardar mere samnay thi

Kaan dharti to kabhi aagay nah barh pati mein
Yeh Sadaon ki jo bhar maar mere samnay thi

Mein ne jab aakay fiza apni tarashi komal
Aik se aik sukhan kar mere samnay thi

Tasht tha tasht mein talwar mere samnay thi
Mein nah larti tu meri haar mere samnay thi
غزل
طشت تھا طشت میں تلوار مرے سامنے تھی
میں نہ لڑتی تو مری ہار مرے سامنے تھی

کتنی دیواریں گراتی ہوئی آئی اُس تک
اور وہاں جسم کی دیوار مرے سامنے تھی

استفادہ نہیں کر پائی کسی عشق سے میں
یہ سہولت یو نہی بیکار مرے سامنے تھی

اتنا مشکل تو کوئی کام نہیں ہوتا ہے
زندگی جتنی گراں بار مرے سامنے تھی

جس کے سب عیب میں لوگوں سے چھپاتی تھی وہ دوست
اِن دنوں آئینہ بردار مرے سامنے تھی

کان دھرتی تو کبھی آگے نہ بڑھ پاتی میں
یہ صداؤں کی جو بھر مار مرے سامنے تھی

میں نے جب آکے فضا اپنی تراشی کومل
ایک سے ایک سخن کار مرے سامنے تھی

طشت تھا طشت میں تلوار مرے سامنے تھی
میں نہ لڑتی تو مری ہار مرے سامنے تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں