Azaab Yeh Bhi Kisi Aur Par Nahi Aaya

Azaab Yeh Bhi Kisi Aur Par Nahi Aaya

Azaab Yeh Bhi Kisi Aur Par Nahi Aaya
Keh aik umar chale aur ghar nahi aaya

Es aik khawab ki hasrat mein jal bujhen aankhen
Wo aik khawab keh ab tak nazar nahi aaya

Karein tou kis se karein na rasayon ka gilla
Safar tamam howa ham safar nahi aaya

Dillon ki bat badan ki zuban se keh dete
Yeh chahte thay magar dil idhar nahi aaya

Ajeeb hi tha mere dour gumrai ka rafeeq
Bichar gaya tou kabhi laut kar nahi aaya

Harem lafz-o-maani se nisbatein bhi rahain
Magar saleeqa-e-araz-e-hunar nahi aaya

Azaab yeh bhi kisi aur par nahi aaya
Keh aik umar chale aur ghar nahi aaya
غزل
عذاب یہ بھی کسی اور پر نہیں آیا
کہ ایک عمر چلے اور گھر نہیں آیا

اس ایک خواب کی حسرت میں جل بجھیں آنکھیں
وہ ایک خواب کہ اب تک نظر نہیں آیا

کریں تو کس سے کریں نا رسائیوں کا گلہ
سفر تمام ہوا ہم سفر نہیں آیا

دلوں کی بات بدن کی زباں سے کہہ دیتے
یہ چاہتے تھے مگر دل ادھر نہیں ایا

عجیب ہی تھا مرے دور گمرہی کا رفیق
بچھڑ گیا تو کبھی لوٹ کر نہیں آیا

حریم لفظ و معانی سے نسبتیں بھی رہیں
مگر سلیقہ عرض ہنر نہیں آیا

عذاب یہ بھی کسی اور پر نہیں آیا
کہ ایک عمر چلے اور گھر نہیں آیا

اپنا تبصرہ بھیجیں