Ye Pichhle Ishq Ki Baaten Hain

نظم:عشق کی باتیں
یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں
جب آنکھ میں خواب دمکتے تھے
جب دلوں میں داغ چمکتے تھے
جب پلکیں شہر کے رستوں میں
اشکوں کا نور لٹاتی تھیں

جب سانسیں اجلے چہروں کی
تن من میں پھول سجاتی تھیں
جب چاند کی رم جھم کرنوں سے
سوچوں میں بھنور پڑ جاتے تھے
 
جب ایک تلاطم رہتا تھا
اپنے بے انت خیالوں میں
ہر عہد نبھانے کی قسمیں
خط خون سے لکھنے کی رسمیں

جب عام تھیں ہم دل والوں میں
اب اپنے پھیکے ہونٹوں پر
کچھ جلتے بجھتے لفظوں کے
یاقوت پگھلتے رہتے ہیں
 
اب اپنی گم سم آنکھوں میں
کچھ دھول ہے بکھری یادوں کی
کچھ گرد آلود سے موسم ہیں
اب دھوپ اگلتی سوچوں میں

کچھ پیماں جلتے رہتے ہیں
اب اپنے ویراں آنگن میں
جتنی صبحوں کی چاندی ہے
جتنی شاموں کا سونا ہے

اس کو خاکستر ہونا ہے
اب یہ باتیں رہنے دیجے
جس عمر میں قصے بنتے تھے
اس عمر کا غم سہنے دیجے

اب اپنی اجڑی آنکھوں میں
جتنی روشن سی راتیں ہیں
اس عمر کی سب سوغاتیں ہیں
جس عمر کے خواب خیال ہوئے

وہ پچھلی عمر تھی بیت گئی
وہ عمر بتائے سال ہوئے
اب اپنی دید کے رستے میں
کچھ رنگ ہے گزرے لمحوں کا

کچھ اشکوں کی باراتیں ہیں
کچھ بھولے بسرے چہرے ہیں
کچھ یادوں کی برساتیں ہیں
یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں
Nazam: Ishq Ki Baaten
Ye Pichhle Ishq Ki Baaten Hain
jab aankh mein khwab damakte the
jab dilon mein dagh chamakte the
jab palken shahr ke raston mein
ashkon ka nur lutati thin

jab sansen ujle chehron ki
tan man mein phul sajati thin
jab chand ki rim-jhim kirnon se
sochon mein bhanwar pad jate the

jab ek talatum rahta tha
apne be-ant khayalon mein
har ahd nibhane ki qasmen
khat khun se likhne ki rasmen

jab aam thin hum dil walon mein
ab apne phike honTon par
kuchh jalte bujhte lafzon ke
yaqut pighalte rahte hain

ab apni gum-sum aankhon mein
kuchh dhul hai bikhri yaadon ki
kuchh gard-alud se mausam hain
ab dhup ugalti sochon mein

kuchh paiman jalte rahte hain
ab apne viran aangan mein
jitni subhon ki chandi hai
jitni shamon ka sona hai

us ko khakistar hona hai
ab ye baaten rahne dije
jis umr mein qisse bante the
us umr ka gham sahne dije

ab apni ujdi aankhon mein
jitni raushan si raaten hain
us umr ki sab saughaten hain
jis umr ke khwab khayal hue

wo pichhli umr thi bit gai
wo umr bitae sal hue
ab apni did ke raste mein
kuchh rang hai guzre lamhon ka

kuchh ashkon ki baraaten hain
kuchh bhule-bisre chehre hain
kuchh yaadon ki barsaten hain
ye pichhle ishq ki baaten hain

اپنا تبصرہ بھیجیں