Khudi Ho Ilm Se Mohkam To Ghairat -E-Jibril

خودی ہو علم سے محکم تو غیرت جبریل
اگر ہو عشق سے محکم تو صور اسرافیل
عذاب دانش حاضر سے با خبر ہوں میں
کہ میں اس آگ میں ڈالا گیا ہوں مثل خلیل
فریب خوردۂ منزل ہے کارواں ورنہ
زیادہ راحت منزل سے ہے نشاط رحیل
نظر نہیں تو مرے حلقۂ سخن میں نہ بیٹھ
کہ نکتہ ہائے خودی ہیں مثال تیغ اصیل
مجھے وہ درس فرنگ آج یاد آتے ہیں
کہاں حضور کی لذت کہاں حجاب دلیل
اندھیری شب ہے جدا اپنے قافلے سے ہے تو
ترے لیے ہے مرا شعلۂ نوا قندیل
غریب و سادہ و رنگیں ہے داستان حرم
نہایت اس کی حسین ابتدا ہے اسماعیل
Khudi Ho Ilm Se Mekam To Gherat Jibril
Agar Ho Ishq Se Mehkam To Sor Asrafeel
 
Azab Danish.e.Hazir Se Bakhabar Hun Main
Keh Main Is Aaag Mein Dala Gya Hun Misl.e.Khaleel
 
Fareb Khorda Manzil  Hai Karwan Warna
Ziada Rahat Manzil Se Hai Nishat.e.Raheel
 
Nazasr Nahi To Mere Halqa.e.Sukhan Mein Na Beth
Keh Nukta Hay Khudi Hain Misal Tegh.e.Aseel
 
Mujhy Who Dars.e.Frang Aj Yad Aty Hain
Kahan Hazoor Ki Lazat Kahan Hijab.e.Daleel
 
Andheri Shab Hai Juda Apne Qafly Se Hai Tu
Tere Liye Hai Mera Shohla Nawa Qandeel
 
Ghareeb.o.Sada.o.Rangeen Hai Dastan.e.Haram
Nehait Is Ki Haseen Ibtida Hai Ismaeel

اپنا تبصرہ بھیجیں