Aaye kuch abr kuch sharab aaye

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
بام مینا سے ماہتاب اترے
دست ساقی میں آفتاب آئے
ہر رگ خوں میں پھر چراغاں ہو
سامنے پھر وہ بے نقاب آئے
عمر کے ہر ورق پہ دل کی نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے
کر رہا تھا غم جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے
جل اٹھے بزم غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے
اس طرح اپنی خامشی گونجی
گویا ہر سمت سے جواب آئے
فیضؔ تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے
aaye kuchh abr kuchh sharab aaye
is ke baad aae jo azab aaye

baam-e-mina se mahtab utre
dast-e-saqi mein aaftab aaye

har rag-e-khun mein phir charaghan ho
samne phir wo be-naqab aaye

umr ke har waraq pe dil ki nazar
teri mehr-o-wafa ke bab aaye

kar raha tha gham-e-jahan ka hisab
aaj tum yaad be-hisab aaye

na gai tere gham ki sardari
dil mein yun roz inqalab aaye

jal uthe bazm-e-ghair ke dar-o-baam
jab bhi hum khanuman-kharab aaye

is tarah apni khamushi gunji
goya har samt se jawab aaye

‘faiz’ thi rah sar-ba-sar manzil
hum jahan pahunche kaamyab aaye

اپنا تبصرہ بھیجیں