Pahli Baat Hi Aakhiri Thi

نظم:پہلی بات
پہلی بات ہی آخری تھی
اس سے آگے بڑھی نہیں
ڈری ہوئی کوئی بیل تھی جیسے
پورے گھر پہ چڑھی نہیں
ڈر ہی کیا تھا کہہ دینے میں
کھل کر بات جو دل میں تھی
آس پاس کوئی اور نہیں تھا
شام تھی نئی محبت کی
ایک جھجک سی ساتھ رہی کیوں
قرب کی ساعت حیراں میں
حد سے آگے بڑھنے کی
پھیل کے اس تک جانے کی
اس کے گھر پر چڑھنے کی
 Poem:Pahli Baat
Pahli Baat Hi Aakhiri Thi
is se aage badhi nahin
dari hui koi bel thi jaise
pure ghar pe chadhi nahin
dar hi kya tha kah dene mein
khul kar baat jo dil mein thi
aas-pas koi aur nahin tha
sham thi nai mohabbat ki
ek jhijak si sath rahi kyun
qurb ki saat-e-hairan mein
had se aage badhne ki
phail ke us tak jaane ki
us ke ghar par chadhne ki

اپنا تبصرہ بھیجیں