Uss Hathon Mein Jo Khanjar Hai Zyada Taiz Hai

Uss Hathon Mein Jo Khanjar Hai Zyada Taiz Hai

Us Hathon Mein Jo Khanjar Hai Zyada Taiz Hai
Aur phir bachpan se hi uss ka nishana taiz hai

Jab kabhi uss par jane ka khayal aata mujhe
Koi aahista se kehta tha keh darya taiz hai

Apna sab kuch har ke lout aaye ho naan mere paas
Mein tumhein kehta bhi rehta tha keh duniya taiz hai

Aaj milna tha bechhar jane ki niat se hamein
Aaj bhi woh dair se pahuncha hai kitna taiz hai

Aaj uss ke gaal choomay hain tu andaza howa
Chaye achi hai magar mitha thora sa taiz hai

Uss hathon mein jo khanjar hai zyada taiz hai
Aur phir bachpan se hi uss ka nishana taiz hai
غزل
اُس کے ہاتھوں میں جو خنجر ہے زیادہ تیز ہے
اور پھر بچپن سے ہی اُس کا نشانہ تیز ہے

جب کبھی اُس پار جانے کا خیال آتا مجھے
کوئی آہستہ سے کہتا تھا کہ دریا تیز ہے

اپنا سب کچھ ہار کے لوٹ آئے ہو ناں میرے پاس
میں تمہیں کہتا بھی رہتا تھا کہ دنیا تیز ہے

آج ملنا تھا بچھڑ جانے کی نیت سے ہمیں
آج بھی وہ دیر سے پہنچا ہے کتنا تیز ہے

آج اُس کے گال چُومے ہیں تو اندازہ ہوا
چائے اچھی ہے مگر میٹھا تھوڑا سا تیز ہے

اُس کے ہاتھوں میں جو جنجر ہے زیادہ تیز ہے
اور پھر بچپن سے ہی اُس کا نشانہ تیز ہے
Poet: Tehzeeb Hafi

اپنا تبصرہ بھیجیں