Phir Se Madhosh Howay, Behkay Batay Bain Kiye

Phir Se Madhosh Howay, Behkay Batay Bain Kiye

Phir Se Madhosh Howay, Behkay Battay Bein Kiye
Wo baray hanstay rahe, ham ne baray bein kiye

Tera ashiq tha koi us se bari khoob jami
Aik mazhab ke thay mil baithay, baray bein kiye

Aik wo aik , jo phir se adakar bana
Aik yeh log keh jo samjhe, baray bein kiye

Mein tou hans hans kar sunta raha teri baatin
Jo samjhdar thay wo bolay baray bein kiye

Phir tere gham ko chupane ka sahara dhondha
Phir kisi qabar pe ja ke baray bein kiye

Phir se madhosh howay, behkay battay bein kiye
Wo baray hanstay rahe, ham ne baray bein kiye
غزل
پھر سے مدہوش ہوئے، بہکے بٹے بین کیے
وہ بڑے ہنستے رہے، ہم نے بڑے بین کیے

تیرا عاشق تھا کوئی اُس سے بڑی خوب جمی
ایک مزہب کے تھے مل بیٹھے ، بڑے بین کیے

ایک وہ ایک ، کہ جو پھر سے اداکار بنا
ایک یہ لوگ کہ جو سمجھے، برے بیں کیے

میں تو ہنس ہنس کر سناتا رہا تیری باتیں
جو سمجھدار تھے وہ بولے بڑے بین کیے

پھر تیرے غم کو چھپانے کا سہارا ڈھونڈا
پھر کسی قبر پہ جاکے، بڑے بین کیے

پھر سے مدہوش ہوئے، بہکے بٹے بین کیے
وہ بڑے ہنستے رہے، ہم نے بڑے بین کیے

اپنا تبصرہ بھیجیں