Karte Karte Imtizaj Kaaba-O-But Khana Hum

Karte Karte Imtizaj Kaaba-O-But Khana Hum

Karte Karte Imtizaj Kaaba-O-But Khana Hum
Us jagah pohanche keh ho kar reh gaye diwana hum

Saans le sakte nahin afsos azadana hum
Jane kab se hain aseer Kaaba-o-but-khana hum

Wo muhabbat he nahin jis mein na hoon shikway gile
Ek kahani tum sunaye jao ek afsana hum

Dair pa nikli na fanoos-e-khirad ki roshni
Barh gayi wehshat bil-akher ho gaye diwana hum

Har do janib ehtiyat achhi hai jab tak ho sake
Yuon tou mein agah sab tum shama ho parwan hum

Ab haqeeqat kya kahen kis se kahen kyon kar kahen
Kuch tou dekha hai keh jis se ho gaye diwana hum

Daman-e-dil shabnam-o-gul se pakarr leta hai aag
Khilqatan hum hain jawab-e-fitrat parwana hum

Pasbaan mafhom-o-maani ko bayan karte rahen
Sunne wale sun chuke hain keh’h chuke afsane hum

Aa chukka hoga sar-e-tor wafa mosa ko hosh
Ab tujhe taklif denge jalwa-e-janana hum

Jeete ji ki anjuman hai Jeete ji ka soz-o-saaz
Ho gayen jis waqat band ankhen na phir dunya na hum

Hum jo mit jayen to farq dair-o-kaaba bhi mitte
Ek parda hain miyan Kaaba-o-but-khana hum

Ilteja hi ilteja baaqi hai shikwa ho chuke
Ab muhabbat tum se karte hain parastarana hum

Jab wo karte hain muhabbat par musalsal guftago
Aisa kuch mehsos hota hai keh hain begana hum

Karte kart imtizaj kaaba-o-but khana hum
Us jagah pohanche keh ho kar reh gaye diwana hum
غزل
کرتے کرتے امتزاج کعبہ و بت خانہ ہم
اس جگہ پہنچے کہ ہو کر رہ گئے دیوانہ ہم

سانس لے سکتے نہیں افسوس آزادانہ ہم
جانے کب سے ہیں اسیر کعبہ و بتخانہ ہم

وہ محبت ہی نہیں جس میں نہ ہوں شکوے گلے
اک کہانی تم سنائے جاؤ اک افسانہ ہم

دیر پا نکلی نہ فانوس خرد کی روشنی
بڑھ گئی وحشت بالاخر ہوگئے دیوانہ ہم

ہر دو جانب احتیاط اچھی ہے جب تک ہوسکے
یوں تو میں آگاہ سب تم شمع ہو پروانہ ہم

اب حقیقت کیا کہیں کس سے کہیں کیوں کر کہیں
کچھ تو دیکھا ہے کہ جس سے ہوگئے دیوانہ ہم

دامن دل شبنم و گل سے پکڑ لیتا ہے اگ
خلقۃ ہم ہین جواب فطرب پروانہ ہم

پاسباں مفہوم و معنی کو بیاں کرتے رہیں
سننے والے سن چکے ہیں کہہ چکے افسانے ہم

اچکا ہوگا سر طور وفا موسیٰ کو ہوش
اب تجھے تکلیف دیں گے جلوہ جانانہ ہم

جیتے جی کی انجمن ہے جیتے جی کا سوز و ساز
ہوگئیں جس وقت بند آنکھیں نہ پھر دنیا نہ ہم

ہم جو مٹ جائیں تو فرق دیر و کعبہ بھی مٹے
ایک پردہ ہیں میان کعبہ و بتخانہ ہم

التجا ہی التجا باقی ہے شکوہ ہو چکے
اب محبت تم سے کرتے ہیں پرستارانہ ہم

جب وہ کرتے ہیں محبت پر مسلسل گفتگو
ایسا کچھ محسوس ہوتا ہے کہ ہیں بیگانہ ہم

اپنا تبصرہ بھیجیں