Wafain Kar Ke Jafawon Ka Gham Uthaye Jaa

Wafain Kar Ke Jafawon Ka Gham Uthaye Jaa

Wafain Kar Ke Jafawon Ka Gham Uthaye Jaa
Usi tarha se zamane ko azamaye jaa

Kisi mein apni sifat ke siwaa kamal nahi
Jidhar isharah fitraat ho sar jhukaye ja

Wo lo rubab se nikli dhuwan utha dil se
Wafa ka raag usi dhon mein gungunaye ja

Nazar ke sath mohabbat badal nahi sakti
Nazar badal ke mohabbat ko azmaye jaa

Khudi ishq ne jis din se khol dein aankhen
Hai aansuon ka taqaza keh muskuraye jaa

Nahi hai gham tou mohabbat ki tarbeyat naqis
Hwadas ayen tou narmi se pesh aye jaa

Thi ibtida mein yeh tadeeb muflasi mujh ko
Ghulam reh ke ghulami pe muskuraye ja

Badal na rah khird ke fareeb mein aa kar
Junon ke naqash qadam par qadam barhaye jaa

Ummed-o-yaas mein jeena hai ishq ka maqsad
Usi muqaam muqqadas pe tilmalaye jaa

Chaman mein fursaat-o-taskeen hai mout ka paigham
Sukoon passand na kar aashiyaa banaye jaa

Yahi hai lutaaf mohabbat yahi hai kaif hayat
haqeeqaton ki binaa par fareeb khaye jaa

Wafa ka khawab hai ehsan khawab be tabeer
Wafayen kar ke muqadar ko azmaye jaa

Wafain kar ke jafawon ka gham uthaye jaa
Usi tarha se zamane ko azamaye jaa
غزل
وفائیں کر کے جفاؤں کا غم اٹھائے جا
اسی طرح سے زمانے کو آزمائے جا

کسی میں اپنی صفت کے سوا کمال نہیں
جدھر اشارۂ فطرت ہو سر جھکائے جا

وہ لو رباب سے نکلی دھواں اٹھا دل سے
وفا کا راگ اسی دھن میں گنگنائے جا

نظر کے ساتھ محبت بدل نہیں سکتی
نظر بدل کے محبت کو آزمائے جا

خودی عشق نے جس دن سے کھول دیں آنکھیں
ہے آنسوؤں کا تقاضا کہ مسکرائے جا

نہیں ہے غم تو محبت کی تربیت ناقص
حوادث آئیں تو نرمی سے پیش آئے جا

تھی ابتدا میں یہ تادیب مفلسی مجھ کو
غلام رہ کے غلامی پہ مسکرائے جا

بدل نہ راہ خرد کے فریب میں آ کر
جنوں کے نقش قدم پر قدم بڑھائے جا

امید و یاس میں جینا ہے عشق کا مقصود
اسی مقام مقدس پہ تلملائے جا

چمن میں فرصت و تسکیں ہے موت کا پیغام
سکوں پسند نہ کر آشیاں بنائے جا

یہی ہے لطف محبت یہی ہے کیف حیات
حقیقتوں کی بنا پر فریب کھائے جا

وفا کا خواب ہے احسان خواب بے تعبیر
وفائیں کر کے مقدر کو آزمائے جا

وفائیں کر کے جفاؤں کا غم اٹھائے جا
اسی طرح سے زمانے کو آزمائے جا

اپنا تبصرہ بھیجیں