Yeh Mojeza Bhi Mohabbat Kabhi Dekhe mujhe

Ghazal

Yeh Mojeza Bhi Mohabbat Kabhi Dekhe mujhe
Keh sang tujh pe giray aur zakhm aae mujhe

 

Main apne paon tale raundta hun saaye ko
Badan mera hi sahi dopahar na bhay mujhe

 

Be rang aud milay gi usay meri khushboo
Wo jab bhi chahe baray shoq se jale mujhe

 

Main ghar se teri tamana pahan kar jab bhi niklo
Barahna sheher main koi nazar na aye mujhe

 

Wohi tu sab se zaida hai nokta cheen mera
Jo muskara ke hamesha galay lagay mujhe

 

Main apne dil se nikalo khayal kis kis ka
Jo tou nahi tou koi aur yaad aye mujhe

 

Zamana dard ke sahraa tak aj le aya
Guzar kar teri zulfon ke saaye saaye mujhe

 

Wo mera dost hai sare jahaan ko hai malaom
Daga kere wo kisi se tou shram aye mujhe

 

Wo meharbaan hai to iqrar kyu nahi karta
Wo bad-gomaa hai tou so bar azmaye mujhe

 

Ma apni zaat main niilaam ho raha hun qateel
Gum-e-hayat se keh do kharid laye mujhe
غزل
یہ معجزہ بھی محبت کبھی دکھاۓ مجھے
کہ سنگ تجھ پے گرے اور زخم آۓ مجھے

 

میں اپنے پاؤں تلے روندتا ہوں ساۓ کو
بدن میرا ہی سہی دوپہر نہ بھاۓ مجھے

 

بے رنگ عود ملے گی اُسے مری خوشبو
وہ جب بھی چاہے بڑے شوق سے جلاۓ مجھے

 

میں گھر سے تیری تمنا پہن کر جب بھی نکلو
برہنہ شہر میں کوئی نظر نہ آے مجھے

 

وہی تو سب سے زیادہ ہے نکتہ چیں میرا
جو مسکرا کے ہمیشہ گلے لگاۓ مجھے

 

میں اپنے دل سے نکالوں خیال کس کس کا
جو تو نہیں تو کوئی اور یاد آۓ مجھے

 

زمانہ درد کے صحرا تک آج لے آیا
گزار کر تری زلفوں کے سائے سائے مجھے

 

وہ میرا دوست ہے سارے جہاں کو ہے معلوم
دغا کرے وہ کسی سے تو شرم آۓ مجھے

 

وہ مہرباں ہے تو اقرار کیوں نہیں کرتا
وہ بد گماں ہے تو سو بار آزماۓ مجھے

 

میں اپنی ذات میں نیلام ہورہا ہوں قتیلؔ
غمِ حیات سے کہہ دو خرید لاۓ مجھے

اپنا تبصرہ بھیجیں