Hamare Daur Ko Barbad Kar Gaye Afkar

Hamare Dowr Ko Barbad Kar Gaye Afkar

Hamare Daur Ko Barbad Kar Gaye Afkar
Yeh kon aye keh ghar ghar se dar gaye afkar
Tamam log bahut khush hain, apni masti mein hain
Mein kis se bolon mere log mar gaye afkar
Wo mujh pe ghour karega tou mujh se pochay ga
Keh adhay adhay ho, adhay kidar gaye afkar
Asada dakh, chehrra sada koi kinj samjhe
So jag hansai hoi, ham jidhar gaye afkar
Humari ankh khuli tum nahi thay, khamshi thi
Laga keh basti se darya guzar gaye afkar
Tumhare bad hamein waswason ne ghair liya
Kisi ne haans ke bolaya tou dar gaye afkar
Khuda bachaye keh shohrat farebi kaitaa hai
Yeh sirf bhonki, mere baal-o-par gaye afkar
Hamare dowr ko barbad kar gaye afkar
Yeh kon aye keh ghar ghar se dar gaye afkar
غزل
ہمارے دور کو برباد کر گئے افکار
یہ کون آئے کہ گھر گھر سے در گئے افکار
تمام لوگ بہت خوش ہیں , اپنی مستی میں ہیں
میں کس سے بولوں مرے لوگ مر گئے افکار
وہ مجھ پہ غور کرے گا تو مجھ سے پوچھے گا
کہ آدھے آدھے ہو , آدھے کدھر گئے افکار
اساڈا ڈکھ, چھڑا ساڈا ہے… کوئی کِنجے سمجھے
سو جگ ہنسائی ہوئی , ہم جدھر گئے افکار
ہماری آنکھ کھلی , تم نہیں تھے , خامشی تھی
لگا کہ بستی سے دریا گزر گئے افکار
تمہارے بعد ہمیں وسوسوں نے گھیر لیا
کسی نے ہنس کے بلایا تو ڈر گئے افکار
خدا بچائے کہ شہرت فریبی کتیا ہے
یہ صرف بھونکی , مرے بال و پر گئے افکار​
ہمارے دور کو برباد کر گئے افکار
یہ کون آئے کہ گھر گھر سے در گئے افکار

اپنا تبصرہ بھیجیں