Itni Bari In Duniyaon Mein Apne Naam Ki Takhti

Itni Bari In Duniyaon Mein Apne Naam Ki Takhti

Itni Bari In Duniyaon Mein Apne Naam Ki Takhti Wali Aik Amarat
Kitne dukhon ki Aentan chun kar ghar banti hai

Pathar pathar jor ke dekho mein bhi aik ghar hai banaya
Rangon, phoolon, tasveeron se usko sajaya

Darwaze ki loh pe apna naam lekhwaya
Lekin us ke har kamre mein tum rehtay ho

Jo utar ke zaina-e-shaam se teri chashme khush mein sama gaye
Wohi jalte bojhte charagh se mere baham o dar ko saja gaye

Yeh jo ashqi ka hai silsila yeh asal mein hai koi mojza
Jo lafz mere goman mein thay wo teri zuban pe aa gaye

Wo jo geet tum ne sunya nahi mere umer bhar ka riaz tha
Mere dard ki thi dastaan jise tum hasi mein uda gaye

Meri umer se na seemat sake mere dil mein itne sawal thay
Tere pass jitne jawab thay teri aik nigha mein aa gaye

Itni bari in duniyaon mein apne naam ki takhti wali aik amarat
Kitne dukhon ki Aentan chun kar ghar banti hai
نظم
اتنی بڑی ان دنیاؤں میں اپنے نام کی تختی والی ایک عمارت
کتنے دکھوں کی اینٹیں چن کر گھر بنتی ہے

پتھر پتھر جوڑ کے دیکھو میں نے بھی ایک گھر ہے بنایا
رنگوں، پھولوں، تصویروں سے اُس کو سجایا

دروازے کی لوح پے اپنا نام لکھوایا
لیکن اُس کے ہر کمرے میں تم رہتے ہو

جو اتر کے زینہ شام سے تیری چشمِ خوش میں سما گئے
وہی جلتے بجھتے چراغ سے میرے باہم و در کو سجا گئے
 
یہ جو عاشقی کا ہے سلسلہ یہ اصل میں ہے کوئی معجزہ
جو لفظ میرے گمان میں تھے وہ تیری زبان پہ آگئے

وہ جو گیت تم نے سنا نہیں میرے عمر بھر کا ریاض تھا
میرے درد کی تھی داستان جسے تم ہسی میں اُڑا گئے

میری عمر سے نہ سمٹ سکے میرے دل میں اتنے سوال تھے
تیرے پاس جتنے جواب تھے تیری ایک نگاہ میں آگئے

اتنی بڑی ان دنیاؤں میں اپنے نام کی تختی والی ایک عمارت
کتنے دکھوں کی اینٹیں چن کر گھر بنتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں