Takhn Tou Agly Safr Ke Liye Bahana Tha

Takhn Tou Agly Safr Ke Liye Bahana Tha

Takhn Tou Agly Safr Ke Liye Bahana Tha
Usy tou youn bhi kisi aur simmt jana tha

Wohi chiragh bujha jis ki lo qyamat thi
Usy pe zarb parri jo shajar purana tha

Mataa e jaan ka badl ek pal ki sar shari
Salok e khwab ka ankhon se tajirana tha

Hawa ki kat shagofon ne jazab kar li thi
Tabhi tou lihja khushboo bhi jarhana tha

Wohi firaq ki batain wohi hikayat e wasal
Nai kitab ka aik ek warq purana tha

Qabaye zard e nigar Khizan pe sajti thi
Tabhi tou chaal ka andaz khusarwana tha

Takhn tou agly safr ke liye bahana tha
Usy tou youn bhi kisi aur simmt jana tha
غزل
تھکن تو اگلے سفر کے لے بہانہ تھا
اُسے تو یوں بھی کسی اور سمت جانا تھا

وہی چراغ بجھا جس کی لو قیامت تھی
اسی پہ ضرب پڑی جو شجر پرانہ تھا

متاع جاں کا بدل ایک پل کی سرشاری
سلوک خواب کا انکھوں سے تاجرانہ تھا

ہوا کی کاٹ شگوفوں نے جذب کرلی تھی
تبھی تو لہجہ خوشبو بھی جارحانہ تھا

وہی فراق کی باتیں وہی حکایت وصل
نئی کتاب کا ایک اک ورق پرانا تھا

قبائے زرد نگارِخزاں پہ سجتی تھی
تبھی تو چال کا انداز خسروانہ تھا

تھکن تو اگلے سفر کے لے بہانہ تھا
اُسے تو یوں بھی کسی اور سمت جانا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں