Khamar Shab Mein Usay Mein Saalam Kar Baitha

Khamar Shab Mein Usay Mein Saalam Kar Baitha

Khamar Shab Mein Usay Mein Saalam Kar Baitha
Jo kaam karna tha mujhko wo kaam kar baitha

Qaba-e-zard pehan kar wo bazam mein aya
Gul hina ko hathali mein tham kar baitha

Chupa gaya tha mohabbat ka raaz mein tou magar
Wo bhool pan mein sukhan-e-dil ko aam kar baitha

Jo so ke utha tou rasta ujar lagta tha
Ponchana tha mujhe manzil pe shaam kar baitha

Thakan safar ki badan shal sa kar gai hai
Munir bura kia jo safar mein qayam kar baitha

Khamar shab mein usay mein saalam kar baitha
Jo kaam karna tha mujhko wo kaam kar baitha
غزل
خمارشب میں اسے میں سلام کر بیٹھا
جو کام کرنا تھا مجھکو وہ کام کر بیٹھا

قباۓ زرد پہن کر وہ بزم میں آیا
گل حنا کو ہتھیلی میں تھام کر بیٹھا

چھپا گیا تھا محبت کا راز میں تو مگر
وہ بھول پن میں سخن دل کو عام کر بیٹھا

جو سو کے اٹھا تو رستہ اجاڑ لگتا تھا
پہنچنا تھا مجھے منزل پہ شام کر بیٹھا

تھکن سفر کی بدن شل سا کر گئی ہے
مؔنیر برا کیا جو سفر میں قیام کر بیٹھا

خمارشب میں اسے میں سلام کر بیٹھا
جو کام کرنا تھا مجھکو وہ کام کر بیٹھا

اپنا تبصرہ بھیجیں