Koi Junoon Koi Soda Na Sar Mein Rakha Jaye

Koi Junoon Koi Soda Na Sar Mein Rakha Jaye

Koi Junoon Koi Soda Na Sar Mein Rakha Jaye
Bas ek rizaq ka manzar nazar mein rakha jaye

Hawa bhi ho gai misaaq-e-teregi mein fareeq
Koi chirag na ab rahaguzar mein rakha jaye

Usi ko baat na ponche jise puhncheni ho
Ye iltizaam bhi arz-e-hunar mein rakha jaye

Na jane kon se tarkash ke teer kab chal jayen
Nisahan-e-muhar Kaman supar mein rakha jaye

Wafa guman hi tehri tou kia zaroor keh ab
Lihaz-e-hamsafar bhi safar mein rakha jaye

Har ek se puchte phirtay hain tere khana badoosh
Azaab-e-dar badri kis ke ghar mein rakha jaye

Hamein bhi afiyat-e-jaan ka hai khayal bahot
Hamein bhi halqa e na mutaaber mein rakha jaye

Koi junoon koi soda na sar mein rakha jaye
Bas ek rizaq ka manzar nazar mein rakha jaye
غزل
کوئی جنوں کوئی سودا نہ سر میں رکھا جائے
بس ایک رزق کا منظر نظر میں رکھا جائے

ہوا بھی ہوگئی میثاق تیرگی میں فریق
کوئی چراغ نہ اب رہگزر میں رکھا جائے

اُسی کو بات نہ پہنچے جسے پہنچنی ہو
یہ التزام بھی عرض ہنر میں رکھا جائے

نہ جانے کون سے ترکش کے تیر کب چل جائیں
نشان مہر کمان سپر میں رکھا جائے

وفا گمان ہی ٹھہری تو کیا ضرور کہ اب
لحاظ ہمسفری بھی سفر میں رکھا جائے

ہر اک سے پوچھتے پھرتے ہیں تیرے خانہ بدوش
عذاب در بدری کس کے گھر میں رکھا جائے

ہمیں بھی عافیت جاں کا ہے خیال بہت
ہمیں بھی حلقئہ نا معتبر میں رکھا جائے

کوئی جنوں کوئی سودا نہ سر میں رکھا جائے
بس ایک رزق کا منظر نظر میں رکھا جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں