Bohat Se Abar Chalay Aa Rahe Thay Jhoom

Bohat Se Abar Chalay Aa Rahe Thay Jhoom

Bohat Se Abar Chalay Aa Rahe Thay Jhoom Ke Sath
So kuch chiragh jalane pare najoom ke sath

Tumhara zikar bhi hai zikar dostan mein raqam
Yeh bil khasos jo likha hai bil umoom ke sath

Mein khushbowon se garizaan hoon iss liye keh kai
Purane zakhm mehakte hain, perfume ke sath

Jo raftagan ko maharat thi, iss liye thi, unhein
Sikhaya jata raha ishq bhi uloom ke sath

Kahin kahin se thi zanjeer zang aaloda
Panp rahi thi baghawat bhi kuch rasoom ke sath

Yeh ehtiyaat kinara kasha lagi thi mujhe
Mein uskay sath thi, woh shahr ke hujoom ke sath

Yeh jashan-e-tark-e-talluq hai dekhna kabhi hum
Tumhara hijr manate hain kitni dhoom ke sath

Woh aik chhoti khushi tak nahi khareed sakay
Woh jin ke pars bharay thay bari raqoom ke sath

Mein namurad nahi aai iss kharabay se
Keh khaak-e-dasht chali aai pair chom ke sath

Bohat se abar chalay aa rahe thay jhoom ke sath
So kuch chiragh jalane pare najoom ke sath
غزل
بہت سے ابر چلے آرہے تھے جھوم کے ساتھ
سو کچھ چراغ جلانے پڑے، نجوم کے ساتھ

تمہارا ذکر بھی ہے ذکر دوستاں میں رقم
یہ بالخصوص جو لکھا ہے بالعموم کے ساتھ

میں خوشبوؤں سے گریزاں ہوں اِس لیے کہ کئی
پرانے زخم مہکتے ہیں ، پرفیوم کے ساتھ

جو رفتگاں کو مہارت تھی ، اِس لیے تھی ، اُنہیں
سکھایا جاتا رہا عشق بھی، علوم کے ساتھ

کہیں کہیں سے تھی زنجیر زنگ آلودہ
پنپ رہی تھی بغاوت بھی کچھ رسوم کے ساتھ

یہ احتیاط، کنارہ کشی لگی تھی مجھے
میں اُسکے ساتھ تھی ، وہ شہر کے ہجوم کے ساتھ

یہ جشنِ ترکِ تعلق ہے ، دیکھنا کبھی، ہم
تمہارا ہجر مناتے ہیں کتنی دھوم کے ساتھ

وہ ایک چھوٹی خوشی تک نہیں خرید سکے
وہ جن کے پرس بھرے تھے، بڑی رقوم کے ساتھ

میں نامراد نہیں آئی اِس خرابے سے
کہ خاکِ دشت چلی آئی پیر چوم کے ساتھ

بہت سے ابر چلے آرہے تھے جھوم کے ساتھ
سو کچھ چراغ جلانے پڑے، نجوم کے ساتھ
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں