Bhula Diya Tha Jis Ko Aik Shaam Yaad A Gaya

 غزل
بھلا دیا تھا جس کو ایک شام یاد آگیا
غزال دیکھ کر وہ خوش خرام یاد آگیا

خدا کا شکر ہے کہ سانس ٹوٹنے سے پیشتر
وہ شکل یاد آگئی وہ نام یاد آگیا

وہ جس کی زلف آنچلوں کی چھاؤں کو ترس گئی
شب وصال اُس کو احترام یاد آگیا

میں پچھلے دس برس سے تیرے دل میں گھر نہ کر سکا
تیری مزاحمت سے ویتنام یاد آگیا
Ghazal
Bhula Diya Tha Jis Ko Aik Shaam Yaad A Gaya
Ghazaal dekh kar wo khush kharam yaad aa gaya

Khuda ka shukar hai keh sans tutany sy peshtar
Wo shakal yaad a gai wo naam yaad aa gaya

Wo jis ki zulaf aanchal ki chawon ko taras gae
Shab-e-wisal us ko ehtraam yaad aa gaya

Main pechaly dass baras say tery dil main ghar kar na saka
Tari mazahamat sy wiatnaam yaad aa gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں