Koi Bhi Rasta Bohat Soch Kar Chonunga Mein

Koi Bhi Rasta Bohat Soch Kar Chonunga Mein

Koi Bhi Rasta Bohat Soch Kar Chonunga Mein
Aur ab ki bar akela safar karunga mein

Usay likhunga keh woh rabta kare mujhe se
Aur ikhtitam peh number nahi likhunga mein

Mein aur hijar ke sadme nahi utha sakta
Woh ab jahan bhi mila hath jorr lunga mein

Jaga jaga nah talluq kharab kar mera
Tere liye tou kisi se bhi lar parounga mein

Woh aik machhli phansane ki dair hai mujh ko
Phir us ke baad machhera nahi rahunga mein

Koi bhi rasta bohat soch kar chonunga mein
Aur ab ki bar akela safar karunga mein
غزل
کوئی بھی رستہ بہت سوچ کر چنوں گا میں
اور اب کی بار اکیلا سفر کروں گا میں

اُسے لکھوں گا کہ وہ رابطہ کرے مجھ سے
اور اختتام پہ نمبر نہیں لکھوں گا میں

میں اور ہجر کے صدمے نہیں اُٹھا سکتا
وہ اب جہاں بھی ملا ہاتھ جوڑ لوں گا میں

جگہ جگہ نہ تعلق خراب کر میرا
ترے لیے تو کسی سے بھی لڑ پڑوں گا میں

وہ ایک مچھلی پھنسانے کی دیر ہے مجھ کو
پھر اُس کے بعد مچھیرا نہیں رہوں گا میں

کوئی بھی رستہ بہت سوچ کر چنوں گا میں
اور اب کی بار اکیلا سفر کروں گا میں

اپنا تبصرہ بھیجیں