Bichhra Hai Jo Ik Bar Tu Milte Nahi Dekha

Bichhra Hai Jo Ik Bar Tu Milte Nahi Dekha

Bichhra Hai Jo Ik Bar Tu Milte Nahi Dekha
Uss zakhm ko hum ne kabhi silte nahi dekha

Ik bar jise chat gai dhoop ki khwahish
Phir shaakh peh uss phool ko khilte nahi dekha

Yak lakht gira hai to jarein tak nikal aayen
Jis pair ko aandhi mein bhi hilte nikal dekha

Kantun mein ghare phool ko chum aaye gi lekin
Titli ke parun ko kabhi chilte nahi dekha

Kis tarah meri rooh hari kar gaya akhir
Woh zeher jisay jisam mein khilte nahi dekha

Bichhra hai jo ik bar tu milte nahi dekha
Uss zakhm ko hum ne kabhi silte nahi dekha
غزل
بچھڑا ہے جو اک بار تو ملتے نہیں دیکھا
اس زخم کو ہم نے کبھی سلتے نہیں دیکھا

اک بار جسے چاٹ گئی دھوپ کی خواہش
پھر شاخ پہ اُس پھول کو کھلتے نہیں دیکھا

یک لخت گرا ہے تو جڑیں تک نکل آئیں
جس پیڑ کو آندھی میں بھی ہلتے نکل دیکھا

کانٹوں میں گھرے پھول کو چوم آئے گی لیکن
تتلی کے پروں کو کبھی چھلتے نہیں دیکھا

کس طرح مری روح ہری کر گیا آخر
وہ زہر جسے جسم میں کھلتے نہیں دیکھا

بچھڑا ہے جو اک بار تو ملتے نہیں دیکھا
اس زخم کو ہم نے کبھی سلتے نہیں دیکھا
Poet: Parveen Shakir

اپنا تبصرہ بھیجیں