Kisi Ka Dard Ho Dil Beqaraar Apna Hai

غزل
کسی کا درد ہو دل بے قرار اپنا ہے
ہوا کہیں کی ہو سینہ فگار اپنا ہے
 
ہو کوئی فصل مگر زخم کھل ہی جاتے ہیں
سدا بہار دل داغدار اپنا ہے
 
بلا سے ہم نہ پئیں مے کدہ تو گرم ہوا
بقدر تشنگی رنج خمار اپنا ہے
 
جو شاد پھرتے تھے کل آج چھپ کے روتے ہیں
ہزار شکر غم پائیدار اپنا ہے
 
اسی لیے یہاں کچھ لوگ ہم سے جلتے ہیں
کہ جی جلانے میں کیوں اختیار اپنا ہے
 
نہ تنگ کر دل محزوں کو اے غم دنیا
خدائی بھر میں یہی غم گسار اپنا ہے
 
کہیں ملا تو کسی دن منا ہی لیں گے اسے
وہ زود رنج سہی پھر بھی یار اپنا ہے
 
وہ کوئی اپنے سوا ہو تو اس کا شکوہ کروں
جدائی اپنی ہے اور انتظار اپنا ہے
 
نہ ڈھونڈھ ناصرؔ آشفتہ حال کو گھر میں
وہ بوئے گل کی طرح بے قرار اپنا ہے
Ghazal
Kisi Ka Dard Ho Dil Beqaraar Apna Hai
Hawa Kahin Ki Ho Sina Figar Apna Hai

Ho Koi Fasl Magar Zakhm Khul Hi Jate Hain
Sada-Bahar Dil-E-Dagh-Dar Apna Hai

Bala Se Hum Na Piyen Mai-Kada To Garm Hua
Ba-Qadr-E-Tishnagi Ranj-E-Khumar Apna Hai

Jo Shad Phirte The Kal Aaj Chhup Ke Rote Hain
Hazar Shukr Gham-E-Paedar Apna Hai

Isi Liye Yahan Kuch Log Hum Se Jalte Hain
Ki Ji Jalane Mein Kyun Ikhtiyar Apna Hai

Na Tang Kar Dil-E-Mahzun Ko Ai Gham-E-Duniya
Khudai-Bhar Mein Yahi Gham-Gusar Apna Hai

Kahin Mila To Kisi Din Mana Hi Lenge Use
Wo Zud-Ranj Sahi Phir Bhi Yar Apna Hai

Wo Koi Apne Siwa Ho To Us Ka Shikwa Karun
Judai Apni Hai Aur Intezaar Apna Hai

Na Dhundh ‘Nasir’-E-Ashufta-Haal Ko Ghar Mein
Wo Bu-E-Gul Ki Tarah Be-Qarar Apna Hai

اپنا تبصرہ بھیجیں