Kal Raat Kuch Ajeeb Samaan Gham

Kal Raat Kuch Ajeeb Samaan Gham

Kal Raat Kuch Ajeeb Samaan Gham Kaday Mein Tha
Mein jisko dhondtha tha wo mere ainen mein tha

Jis ki nigaah mein thien sitaroon ki manzilen
Wo meer-e-kainat usi qaflay mein tha

Rah geer sun rahe thay yeh kis jishan nou ka shoor
Kal raat mera zikar yeh kis silsilay mein tha

Raqsaan thay rind jaise bhanwor mein shafiq ke phool
Jo paon parh rha tha baray qaiday mein tha

Chirka jise adam ke samandar pe aap ne
Sehra tamam khaak ke es bulbulay mein tha

Minnat guzar ahl-e-hos ho saka na dil
Haayl mera zameer mere rastay mein tha

Hai farz es ataye junoon ka bhi shukaria
Liken yeh be shumar karm kis silay mein tha

Ab aa ke keh rahe ho ke ruswai se daroo
Yeh bal tu kabhi ka mere aainen mein tha

Sunta hon sarnaghon thay farishtay mere hazoor
Mein jane apni zaat ke kis marhalay mein tha

Hain sabt mere dil pe zamane ki thokaren
Mein ek saang-e-rah tha jis rastay mein tha

Kuch bhi na tha azal mein bajaz shualaa wajod
Haan dour tak adaam ka dhowan hashiaye mein tha

Mein ne jo apna naam pukara tou haans para
Yeh mujh sa kon shakhs mere rastay mein tha

Thi noqta-e-nigaaah tak aazadi amal
Parkar ki tarha mein rawan dairaye mein tha

Zanjeer ki sada thi na moaj shamem-e-zulf
Yeh kia tilisam un ke mere faslaye mein tha

Ab roh itrafe badan se hai munharif
Ek yeh bhi sang-e-mel mere rastay mein tha

Danish kai nasheeb nazar se guzar gaye
Har rand aainen ke tarha maikday mein tha

Kal raat kuch ajeeb samaan gham Kaday mein tha
Mein jisko dhondtha tha wo mere ainen mein tha
غزل
کل رات کچھ عجیب سماں غم کدے میں تھا
میں جس کو ڈھونڈھتا تھا وہ مرے آئنے میں تھا

جس کی نگاہ میں تھیں ستاروں کی منزلیں
وہ میر کائنات اسی قافلے میں تھا

رہ گیر سن رہے تھے یہ کس جشن‌ نو کا شور
کل رات میرا ذکر یہ کس سلسلے میں تھا

رقصاں تھے رند جیسے بھنور میں شفق کے پھول
جو پاوں پڑھ رہا تھا بڑے قاعدے میں تھا

چھڑکا جسے عدم کے سمندر پہ آپ نے
صحرا تمام خاک کے اس بلبلے میں تھا

منت گزار اہل ہوس ہو سکا نہ دل
حائل مرا ضمیر مرے راستے میں تھا

ہے فرض اس عطائے جنوں کا بھی شکریہ
لیکن یہ بے شمار کرم کس صلے میں تھا

اب آ کے کہہ رہے ہو کہ رسوائی سے ڈرو
یہ بال تو کبھی کا مرے آئینے میں تھا

سنتا ہوں سرنگوں تھے فرشتے مرے حضور
میں جانے اپنی ذات کے کس مرحلے میں تھا

ہیں ثبت میرے دل پہ زمانے کی ٹھوکریں
میں ایک سنگ راہ تھا جس راستے میں تھا

کچھ بھی نہ تھا ازل میں بجز شعلۂ وجود
ہاں دور تک عدم کا دھواں حاشیے میں تھا

میں نے جو اپنا نام پکارا تو ہنس پڑا
یہ مجھ سا کون شخص مرے راستے میں تھا

تھی نقطہ نگاہ تک آزادی عمل
پرکار کی طرح میں رواں دائرے میں تھا

زنجیر کی صدا تھی نہ موج شمیم زلف
یہ کیا طلسم ان کے مرے فاصلے میں تھا

اب روح اعتراف بدن سے ہے منحرف
اک یہ بھی سنگ میل مرے راستے میں تھا

دانش کئی نشیب نظر سے گزر گئے
ہر رند آئنے کی طرح میکدے میں تھا

کل رات کچھ عجیب سماں غم کدے میں تھا
میں جس کو ڈھونڈھتا تھا وہ مرے آئنے میں تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں