Kaseer Qaumi Aur Aazad Company Ke Ghulam

Kaseer Qaumi Aur Aazad Company Ke Ghulam

Kaseer Qaumi Aur Aazad Company Ke Ghulam
Yeh naw se paanch tak ik daftari ghari ke ghulam

Mein inn ko hukum sunata hoon uss ke hukum ke baad
Mere ghulam bhi hain asal mein ussi ke ghulam

Baray idaaron se taleem yafta khush posh
Bohat nafees hain ikkisween sadi ke ghulam

Tabhi kaneez ki cheekhen jaga nah payen unhein
Keh so rahi thay mushaqqat ke jaam pi ke ghulam

Hamein bhi koi dikha de ujal ke khufia surang
Faarar hote hain jis se yeh zindagi ke ghulam

Parha kalam-e-fareed aur mujh aisay punjabi
Bah sad niaz hoye ik saraiyki ke ghulam

Kisi ke baap ke nokar nahi keh hukum sunen
Bas apni marzi ke malik hain hum ali ke ghulam

Kaseer qaumi aur aazad company ke ghulam
Yeh naw se paanch tak ik daftari ghari ke ghulam
غزل
کثیر قومی اور آزاد کمپنی کے غلام
یہ نو سے پانچ تک اک دفتری گھڑی کے غلام

میں اِن کو حکم سناتا ہوں اُس کے حکم کے بعد
مرے غلام بھی ہیں اصل میں اُسی کے غلام

بڑے اِداروں سے تعلیم یافتہ خوش پوش
بہت نفیس ہیں، اکسویں صدی کے غلام

تبھی کنیز کی چیخیں جگا نہ پائیں اُنہیں
کہ سو رہے تھے مشقت کے جام پی کے غلام

ہمیں بھی کوئی دِکھا دے اُجل کے خفیہ سرنگ
فرار ہوتے ہیں جس سے یہ زندگی کے غلام

پڑھا کلامِ فرید اور مجھ ایسے پنجابی
بہ صد نیاز ہوئے اک سرائیکی کے غلام

کسی کے باپ کے نوکر نہیں کہ حکم سنیں
بس اپنی مرضی کے مالک ہیں ہم علی کے غلام

کثیر قومی اور آزاد کمپنی کے غلام
یہ نو سے پانچ تک اک دفتری گھڑی کے غلام
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں