Kisi Ko Apne Amal Ka hisab Kya Dete

کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے
سوال سارے غلط تھے جواب کیا دیتے
خراب صدیوں کی بے خوابیاں تھیں آنکھوں میں
اب ان بے انت خلاؤں میں خواب کیا دیتے
ہوا کی طرح مسافر تھے دلبروں کے دل
انہیں بس ایک ہی گھر کا عذاب کیا دیتے
شراب دل کی طلب تھی شرع کے پہرے میں
ہم اتنی تنگی میں اس کو شراب کیا دیتے
منیرؔ دشت شروع سے سراب آسا تھا
اس آیئنے کو تمنا کی آب کیا دیتے
Kisi Ko Apne Amal Ka Hisab Kya Dete
sawal sare ghalat the jawab kya dete

kharab sadiyon ki be-khwabiyan thin aankhon mein
ab in be-ant khalaon mein khwab kya dete

hawa ki tarah musafir the dilbaron ke dil
unhen bas ek hi ghar ka azab kya dete

sharab dil ki talab thi shara ke pahre mein
hum itni tangi mein us ko sharab kya dete

‘munir’ dasht shurua se sarab-asa tha
is aaine ko tamanna ki aab kya dete

اپنا تبصرہ بھیجیں