Kuch Bhi Nahi Kahin Nahi Khwab| Urdu Ghazal

Kuch Bhi Nahi Kahin Nahi Khwab| Urdu Ghazal

Kuch Bhi Nahi Kahin Nahi Khwab Ke Ikhtiyar Mein
Raat guzar di gai subah ke intizar mein

Baab-e-ataa ke samne ahl-e-kamal ka hajoom
Jin ko tha sar kashi peh naaz wo bhi usi qatar mein

Jaisay fasad khoon se jild badan peh daagh bars
Dil ki siyahiaa bhi hai daman daghdaar mein

Waqat ki thokron mein hai aqda kushaion ko za’am
Kaisi ulajh rahi hai dor nakhon hoshiyar mein

Aaye ga aaye ga wo din ho ke rahega sab hisaab
Waqt bhi intezar mein khalq bhi intezar mein

Jaisi lagi thi dil mein aag waisi ghazal bani nahi
Lafz teher nahi sakay dard ki taiz dhar mein

Kuch bhi nahi kahin nahi khwab ke Ikhtiyar mein
Raat guzar di gai subah ke intizar mein
غزل
کچھ بھی نہیں کہیں نہیں خواب کے اختیار میں
رات گزر دی گئی صبح کے انتظار میں

باب عطا کے سامنے اہل کمال کا ہجوم
جن کو تھا سر کشی پہ ناز وہ بھی اسی قطار میں

جیسے فساد خون سے جلد بدن پہ داغ برص
دل کی سیاہیاں بھی ہیں دامن داغدار میں

وقت کی ٹھوکروں میں ہے عقدہ کشائیوں کو زعم
کیسی الجھ رہی ہے ڈور ناخن ہوشیار میں

آئے گا آئے گا وہ دن ہو کے رہے گا سب حساب
وقت بھی انتظار میں خلق بھی انتظار میں

جیسی لگی تھی دل میں آگ ویسی غزل بنی نہیں
لفظ ٹھر نہیں سکے درد کی تیز دھار میں

کچھ بھی نہیں کہیں نہیں خواب کے اختیار میں
رات گزر دی گئی صبح کے انتظار میں
Read More Click here

اپنا تبصرہ بھیجیں