Chiragh Rah Bujha Kia Keh Rahnuma Bhi Gaya

Chiragh Rah Bujha Kia Keh Rahnuma Bhi Gaya

Chiragh Rah Bujha Kia Keh Rahnuma Bhi Gaya
Hawa ke saath musafir ka naqsh pa bhi gaya

Mein phool chunti rahi aur mujhe khabar nah hoi
Woh shakhs aa ke mere shahr se chala bhi gaya

Bohat aziz sahi usi ko meri dil dari
Magar yeh hai keh kabhi dil mera dikha bhi gaya

Ab unn darichon peh gehray dabaiz parde hain
Woh tanak jhanak ka masoom silsila bhi gaya

Sab aaye meri ayadat ko woh bhi aaya tha
Jo sab gaye to mera dard aanshna bhi gaya

Yeh ghurbatien meri aankhon mein kaisi utri hain
Keh khwab bhi mere rukhsat hain ratjaga bhi gaya

Chiragh rah bujha kia keh rahnuma bhi gaya
Hawa ke saath musafir ka naqsh pa bhi gaya
غزل
چراغ راہ بجھا کیا کہ رہنما بھی گیا
ہوا کے ساتھ مسافر کا نقش پا بھی گیا

میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی
وہ شخص آکے مرے شہر سے چلا بھی گیا

بہت عزیز سہی اُس کو میری دل داری
مگر یہ ہے کہ کبھی دل مرا دکھا بھی گیا

اب اُن دریچوں پہ گہرے دبیز پردے ہیں
وہ تانک جھانک کا معصوم سلسلہ بھی گیا

سب آئے میری عیادت کو وہ بھی آیا تھا

جو سب گئے تو مرا درد آشنا بھی گیا
یہ غربتیں مری آنکھوں میں کیسی اُتری ہیں

کہ خواب بھی مرے رخصت ہیں رتجگا بھی گیا
چراغ راہ بجھا کیا کہ رہنما بھی گیا
ہوا کے ساتھ مسافر کا نقش پا بھی گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں