Samundaron Ke Udhar Se Koi Sada Aai

غزل
سمندروں کے ادھر سے کوئی صدا آئی
دلوں کے بند دریچے کھلے ہوا آئی
 
سرک گئے تھے جو آنچل وہ پھر سنوارے گئے
کھلے ہوئے تھے جو سر ان پہ پھر ردا آئی
 
اتر رہی ہیں عجب خوشبوئیں رگ و پے میں
یہ کس کو چھو کے مرے شہر میں صبا آئی
 
اسے پکارا تو ہونٹوں پہ کوئی نام نہ تھا
محبتوں کے سفر میں عجب فضا آئی
 
کہیں رہے وہ مگر خیریت کے ساتھ رہے
اٹھائے ہاتھ تو یاد ایک ہی دعا آئی
Ghazal
Samundaron Ke Udhar Se Koi Sada Aai
Dilon ke band dariche khule hawa aai

Sarak gae the jo aanchal wo phir sanware gae
Khule hue the jo sar un pe phir rida aai

Utar rahi hain ajab khushbuen rag-o-pai mein
Ye kis ko chhu ke mere shahr mein saba aai

Use pukara to honton pe koi nam na tha
Mohabbaton ke safar mein ajab faza aai

Kahin rahe wo magar khairiyat ke sath rahe
Uthae hath to yaad ek hi dua aai

اپنا تبصرہ بھیجیں