Akilay Kia Pas-E-Deewar-O-Dar Gaye Hum Tum

Akilay Kia Pas-E-Deewar-O-Dar Gaye Hum Tum

Akilay Kia Pas-E-Deewar-O-Dar Gaye Hum Tum
Saggan khufta ko hashyaar kar gaye hum tum

Qadam qadam peh ajab be haya nigahon ka
Hisar sa nazar aaya jidhar gaye hum tum

Gulun ne khoob pazeerai ki keh bhole se
Kisi chaman mein nah bar dagar gaye hum tum

Ummed wasal ke din kat gaye bhatakne mein
Nah hotelon peh yaqeen tha nah ghar gaye hum tum

Hawaye dahar ne sahma rakha tha kis darja
Kawar bi kahin kharka to dar gaye hum tum

Falak ki dhan thi magar farsh par hamre paon
Jame nah thay keh khala mein bikhar gaye hum tum

Zahe yeh himmat parwaaz bhi magr ab tu
Nasheeb mein kai zeene utar gaye hum tum

Akilay Kia Pas-E-Deewar-O-Dar Gaye Hum Tum
Saggan khufta ko hashyaar kar gaye hum tum
غزل
اکیلے کیا پس دیوار و در گئے ہم تم
سگان خفتہ کو ہشیار کر گئے ہم تم

قدم قدم پہ عجب بے حیا نگاہوں کا
حصار سا نظر آیا جدھر گئے ہم تم

گلوں نے خوب پذیرائی کی کہ بھولے سے
کسی چمن میں نہ بار دگر گئے ہم تم

اُمید وصل کے دن کٹ گئے بھٹکنے میں
نہ ہوٹلوں پہ یقین تھا نہ گھر گئے ہم تم

ہوائے دہر نے سہما رکھا تھا کس درجہ
کواڑ بھی کہیں کھڑکا تو ڈر گئے ہم تم

فلک کی دھن تھی مگر فرش پر ہمارے پاؤں
جمے نہ تھے کہ خلا میں بکھر گئے ہم تم

زہے یہ ہمت پرواز بھی مگر اب تو
نشیب میں کئی زینے اُتر گئے ہم تم

اپنا تبصرہ بھیجیں