Agar Mehnat Se Duniya Mein| Ghazal Ehsan Danish

Agar Mehnat Se Duniya Mein| Ghazal Ehsan Danish

Agar Mehnat Se Duniya Mein Badal Sakti Hain Taqdeerain
Zaboon haal iss qadar mazdoor kyun hai hum nahi samjhay

Ghareebun ka lahoo jin ki khuraakon mein shamil hai
Unhein chehro peh rang-o-noor kyun hai hum nahi samjhay

Zaroorat mand be tehzeeb-o-be tauqeer hain lekin
Har ik kursi nasheen maghroor kyun hai hum nahi samjhay

Jawab aahon ka ewaan-e-hukoomat se nahi aata
Dilon se arsh itni dour kyun hai hum nahi samjhay

juraim dekhti aankhon namu pate hain barhe hain
Adalat adal se mazoor kyun hai hum nahi samjhay

Dil-e-ehsan Danish par hain kyun zarben do alam ki
Usi ka jam chakhna choor kyun hai hum nahi samjhay

Agar mehnat se duniya mein badal sakti hain taqdeerain
Zaboon haal iss qadar mazdoor kyun hai hum nahi samjhay
غزل
اگر محنت سے دنیا میں بدل سکتی ہیں تقدیریں
زبوں حال اس قدر مزدور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

غریبوں کا لہو جن کی خوراکوں میں شامل ہے
اُنہیں چہروں پہ رنگ و نور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

ضرورت مند بے تہذیب و بے توقیر ہیں لیکن
ہر اک کرسی نشیں مغرور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

جواب آہوں کا ایوانِ حکومت سے نہیں آتا
دلوں سے عرش اتنی دور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

جرائم دیکھتی آنکھوں نمو پاتے ہیں بڑھے ہیں
عدالت عدل سے معزور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

دلِ احسان دانش پر ہیں کیوں ضربیں دو عالم کی
اسی کا جام چکنا چور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

اگر محنت سے دنیا میں بدل سکتی ہیں تقدیریں
زبوں حال اس قدر مزدور کیوں ہے ہم نہیں سمجھے

اپنا تبصرہ بھیجیں