Farishton Se Bhi Acha Main Bura Hone Se Pahle Tha

غزل
رشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا
وہ مجھ سے انتہائی خوش خفا ہونے سے پہلے تھا

کیا کرتے تھے باتیں زندگی بھر ساتھ دینے کی
مگر یہ حوصلہ ہم میں جدا ہونے سے پہلے تھا

حقیقت سے خیال اچھا ہے بیداری سے خواب اچھا
تصور میں وہ کیسا سامنا ہونے سے پہلے تھا

اگر معدوم کو موجود کہنے میں تأمل ہے
تو جو کچھ بھی یہاں ہے آج کیا ہونے سے پہلے تھا

کسی بچھڑے ہوئے کا لوٹ آنا غیر ممکن ہے
مجھے بھی یہ گماں اک تجربہ ہونے سے پہلے تھا

شعورؔ اس سے ہمیں کیا انتہا کے بعد کیا ہوگا
بہت ہوگا تو وہ جو ابتدا ہونے سے پہلے تھا
Ghazal
Farishton Se Bhi Acha Main Bura Hone Se Pahle Tha
Wo Mujh Se Intihai Khush Khafa Hone Se Pahle Tha

Kiya karte the baaten zindagi-bhar sath dene ki
Magar ye hausla hum mein juda hone se pahle tha

Haqiqat se khayal achchha hai bedari se khwab achchha
Tasawwur mein wo kaisa samna hone se pahle tha

Agar madum ko maujud kahne mein tammul hai
To jo kuchh bhi yahan hai aaj kya hone se pahle tha

Kisi bichhde hue ka laut aana ghair-mumkin hai
Mujhe bhi ye guman ek tajraba hone se pahle tha

‘Shuur’ is se hamein kya intiha ke baad kya hoga
Bahut hoga to wo jo ibtida hone se pahle tha

اپنا تبصرہ بھیجیں