Phone Tou Dour Wahan Khat| Zia Mazkoor Ghazal

Phone Tou Dour Wahan Khat| Zia Mazkoor Ghazal

Phone Tou Dour Wahan Khat Bhi Nahi Pohanchen Gay
Ab ke yeh log tumhein aisi jaga bhejen gay

Zindagi dekh chukke tujhe ko bare parday par
Aaj ke baad koi film nahi dekhen gay

Masla yeh hai mein dushman ke qaren pohancho ga
Aur kabootar meri talwar peh aabethen gay

Hum ko ik bar kinaron se nikal jane don
Phir tou selab ke pani ki tarah phelen gay

Tu woh darya hai agar jaldi nahi ki tou ne
Khud samandar tujhe milne ke liye aayen gay

Seegha raz mein rakhen gay nahi ishq tera
Hum tere naam se khushbu ki dukan kholen gay

Phone tou dour wahan khat bhi nahi pohanchen gay
Ab ke yeh log tumhein aisi jaga bhejen gay
غزل
فون تو دور وہاں خط بھی نہیں پہنچیں گے
اب کے یہ لوگ تمہیں ایسی جگہ بھیجیں گے

زندگی دیکھ چکے تجھ کو بڑے پردے پر
آج کے بعد کوئی فلم نہیں دیکھیں گے

مسئلہ یہ ہے میں دشمن کے قریں پہنچوں گا
اور کبوتر مری تلوار پہ آبیٹھیں گے

ہم کو اک بار کناروں سے نکل جانے دو
پھر تو سیلاب کے پانی کی طرح پھیلیں گے

تو وہ دریا ہے اگر جلدی نہیں کی تو نے
خود سمندر تجھے ملنے کے لیے آئیں گے

صیغہ راز میں رکھیں گے نہیں عشق ترا
ہم تیرے نام سے خوشبو کی دکاں کھولیں گے

فون تو دور وہاں خط بھی نہیں پہنچیں گے
اب کے یہ لوگ تمہیں ایسی جگہ بھیجیں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں