Sofaid Shirt Thi Tum Seerhiyon Peh Baithe Thay

Safaid Shirt Thi Tum Seerhiyon Peh Baithe Thay

Safaid Shirt Thi Tum Seerhiyon Peh Baithe Thay
Mein jab class se nikli thi muskuraate howay

Hamari pehli mulaqat yad hai na tumhein
Ishare karte thay tum mujh ko aate jate howay

Tamam raat wo aankhen na bhoolti thi mujhe
Keh jin mein mere liye izzat aur waqar dikhe

Mujhe yeh duniya bayaban thi magar
Ek din tum ek bar dikhe aur be shumaar dikhe

Mujhe yeh dar tha keh tum bhi kahi wahi tou nahi
Jo jism par hi tamanna ke daagh chorte hain

Khuda ka shukar hai keh tum un say mukhtalif nikle
Jo phool tor ke ghusse mein baagh chorte hain

Zyada waqat na guzra tha es talluq ko
Keh us ke baad wo lamha qari qari aaya

Chowa tha tum ne mujhe aur mujhe mohabbat par
Yaqeen aaya tha lekin kabhi nahi aaya

Phir us ke baad mera nasha-e-sakoot geya
Mein kashmakash mein thi tum mere kon lagte ho

Mein amrita tumhein sochon tum mere sahir ho
Mein farha tumhein dekho tou tum johan lagte ho

Ham ek sath rahe aur hamein pata na chala
Talooqat ki had bandia bhi hoti hain

Mohabbaton ki safar mein hai jo raste hain wohi
Hawas ki simmat mein pak dandiyaan bhi hoti hain

Tumhare waste jo mere dil mein hai hafi
Tumhein mein kaash yeh sab kuch bata pati

Aur ab mazeed na milne ki koi waja nahi
Bas apni maa se mein aankhen nahi mila pati

Safaid shirt thi tum seerhiyon pe baithe thay
Mein jab class se nikli thi muskuraate howay
نظم
سفید شرٹ تھی تم سیڑھیوں پہ بیٹھے تھے
میں جب کلاس سے نکلی تھی مسکراتے ہوئے

ہماری پہلی ملاقات یاد ہے نا تمہیں
اشارے کرتے تھے تم مجھ کو آتے جاتے ہوئے

تمام رات وہ آنکھیں نہ بھولتی تھی مجھے
کہ جن میں میرے لئے عزت اور وقار دکھے

مجھے یہ دنیا بیابان تھی مگر
اِک دن تم اِک بار دکھے اور بے شمار دکھے

مجھے یہ ڈر تھا کہ تم بھی کہی وہی تو نہیں
جو جسم پر ہی تمنا کے داغ چھوڑتے ہیں

خدا کا شکرہے کہ تم اُن سے مختلف نکلے
جو پھول توڑ کے غصے میں باغ چھوڑتے ہیں

زیادہ وقت نہ گزرا تھا اِس تعلق کو
کہ اُس کے بعد وہ لمحہ قری قری آیا

چھوا تھا تم نے مجھے اور مجھے محبت پر
یقین آیا تھا لیکن کبھی نہیں آیا

پھر اُس کے بعد میرا نشہء سکوت گیا
میں کشمکش میں تھی تم میرے کون لگتے ہو

میں امرتا تمہیں سوچوں تم میرے ساحر ہو
میں فارحہ تمہیں دیکھو تو جوہن لگتے ہو

ہم اِک ساتھ رہے اور ہمیں پتہ نہ چلا
تعلقات کی حد بندیا بھی ہوتی ہیں

محبتوں کی سفر میں ہے جو راستے ہیں وہی
ہوس کی سمت میں پک ڈنڈیاں بھی ہوتی ہیں

تمہارے واسطے جو میرے دل میں ہے حافی
تمہیں میں کاش یہ سب کچھ بتا پاتی

اوراب مزید نہ ملنے کی کوئی وجہ نہیں
بس اپنی ماں سے میں آنکھیں نہیں ملا پاتی

اپنا تبصرہ بھیجیں