Meri Hayat Hai Bas Raat Ke Andhere Tak

غزل
مری حیات ہے بس رات کے اندھیرے تک
مجھے ہوا سے بچائے رکھو سویرے تک

دکان دل میں نوادر سجے ہوئے ہیں مگر
یہ وہ جگہ ہے کہ آتے نہیں لٹیرے تک

مجھے قبول ہیں یہ گردشیں تہ دل سے
رہیں جو صرف ترے بازوؤں کے گھیرے تک

سڑک پہ سوئے ہوئے آدمی کو سونے دو
وہ خواب میں تو پہنچ جائے گا بسیرے تک

چمک دمک میں دکھائی نہیں دیے آنسو
اگرچہ میں نے یہ نگ راہ میں بکھیرے تک

کہاں ہیں اب وہ مسافر نواز بہتیرے
اٹھا کے لے گئے خانہ بدوش ڈیرے تک

تھکا ہوا ہوں مگر اس قدر نہیں کہ شعورؔ
لگا سکوں نہ اب اس کی گلی کے پھیرے تک
Ghazal
Meri Hayat Hai Bas Raat Ke Andhere Tak
Mujhe hawa se bachae rakho sawere tak

Dukan-e-dil mein nawadir saje hue hain magar
Ye wo jagah hai ki aate nahin lutere tak

Mujhe qubul hain ye gardishen tah-e-dil se
Rahen jo sirf tere bazuon ke ghere tak

Sadak pe soe hue aadmi ko sone do
Wo khwab mein to pahunch jaega basere tak

Chamak-damak mein dikhai nahin diye aansu
Agarche main ne ye nag rah mein bikhere tak

Kahan hain ab wo musafir-nawaz bahutere
Utha ke le gae khana-ba-dosh dere tak

Yhaka hua hun magar is qadar nahin ki ‘shuur’
Laga sakun na ab us ki gali ke phere tak

اپنا تبصرہ بھیجیں